2

ٹاپ 32 بہترین باریش 2 لائنز اردو شاعری-بارش اردو شایری۔

زمین پر پانی ہمیشہ سے زندگی کی علامت رہا ہے۔شاعری کی زبان میں برسات کا موسم بھی ایک رومانوی موسم ہوتا ہے۔ بارش کی نظمیں بارش سے محبت کرنے والے لوگوں میں بہت مشہور ہیں۔ اس حصے میں ، ہم نے آپ کے لیے کئی مشہور شعراء کی برساتی نظموں کا مجموعہ مرتب کیا ہے ، برسات کے موسم کی رومانوی شاعری کو سراہتے ہیں اور اسے اپنے پیاروں کے ساتھ شیئر کرتے ہیں۔ بارش کی نظمیں ان لوگوں کے لیے بہت پیاری اور رومانوی ہیں جو واقعی بارش کو پسند کرتے ہیں۔ بارش کی نظمیں اس ویب سائٹ کا ایک اہم حصہ ہیں۔ بارش انسان کی اندرونی خوشی پیدا کرتی ہے ، اور محبت مون سون بارش بناتی ہے۔ موسم سب سے زیادہ متوقع ہے۔ برسات کا موسم یہاں ہے۔ ، خوشی ہر ایک کے چہرے پر آتی ہے۔ جب آپ برسات کے موسم میں سڑک پر چلتے ہیں تو بارش کے قطرے آپ کے چہرے پر گرتے ہیں۔خوشی محسوس کرو برسات کا موسم خوشی اور سکون لاتا ہے۔ محبت اور رومانس۔ اپنے دل کو کھولیں۔ جب آپ برسات کے موسم میں پتیوں اور سرسوں کی سرگوشیاں سنتے ہیں تو آپ کو محبت اور بارش میں مماثلت نظر آئے گی۔ ہر کوئی اس میں دوڑتا ہے لیکن آپ کو پسند ہے بارش میں بیٹھو.

ہمارے شہر آجاؤ صدا برسات رہتی ہے

کبھی بادل برستے ہیں کبھی آنکھیں برستی ہیں


hamaray shehar aajao sada barsaat rehti hai
kabhi baadal baraste hain kabhi ankhen barasti hain

ساتھ بارش میں لیے پھرتے ہو اس کو انجمؔ

تم نے اس شہر میں کیا آگ لگانی ہے کوئی

sath barish mein liye phirtay ho is ko anjumؔ
tum ne is shehar mein kya aag lagany hai koi

کیوں مانگ رہے ہو کسی بارش کی دعائیں

تم اپنے شکستہ در و دیوار تو دیکھو

kyun maang rahay ho kisi barish ki duayen
tum –apne shakista dar o deewar to dekho

کیا روگ دے گئی ہے یہ نئے موسم کی بارش

مجھے یاد آرہے ہیں مجھے بھول جانے والے

kya rog day gayi hai yeh naye mausam ki barish
mujhe yaad arhay hain mujhe bhool jane walay

حیرت سے تکتا ہے صحرا بارش کے نذرانے کو

کتنی دور سے آئی ہے یہ ریت سے ہاتھ ملانے کو

herat se taktaa hai sehraa barish ke nazrane ko
kitni daur se aayi hai yeh rait se haath milaane ko

میں چپ کراتا ہوں ہر شب امڈتی بارش کو

مگر یہ روز گئی بات چھیڑ دیتی ہے

mein chup karata hon har shab umadti barish ko
magar yeh roz gayi baat chairr deti hai

میں کہ کاغذ کی ایک کشتی ہوں

پہلی بارش ہی آخری ہے مجھے

mein ke kaghaz ki aik kashti hon
pehli barish hi aakhri hai mujhe

پیاسو رہو نہ دشت میں بارش کے منتظر

مارو زمیں پہ پاؤں کہ پانی نکل پڑے

pyaso raho nah dasht mein barish ke muntazir
maro zamee pay paon ke pani nikal parre

میں وہ صحرا جسے پانی کی ہوس لے ڈوبی

تو وہ بادل جو کبھی ٹوٹ کے برسا ہی نہیں

mein woh sehraa jisay pani ki hawas le doobi
to woh baadal jo kabhi toot ke barsa hi nahi

رنگ برسات نے بھرے کچھ تو

زخم دل کے ہوئے ہرے کچھ تو

rang barsaat ne bharay kuch to
zakham dil ke hue harey kuch to

برسات میں بھی یاد نہ جب اُن کو ہم آئے

پھر کون سے موسم سے کوئی آس لگائے

barsaat mein bhi yaad nah jab unn ko hum aaye
phir kon se mausam se koi aas lagaye

تمام رات نہایا تھا شہر بارش میں

وہ رنگ اتر ہی گئے جو اترنے والے تھے

tamam raat nahaya tha shehar barish mein
woh rang utar hi gaye jo utrney walay thay

اس نے بارش میں بھی کھڑکی کھول کے دیکھا نہیں

بھیگنے والوں کو کل کیا کیا پریشانی ہوئی

is ne barish mein bhi khirki khol ke dekha nahi
bhigne walon ko kal kya kya pareshani hui

اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے

جاگ اٹھتی ہیں عجب خواہشیں انگڑائی کی

ab bhi barsaat ki raton mein badan toot-ta hai
jaag uthti hain ajab khuwaishe angrai ki

ٹوٹ پڑتی تھیں گھٹائیں جن کی آنکھیں دیکھ کر

وہ بھری برسات میں ترسے ہیں پانی کے لیے

toot padtee theen ghatain jin ki ankhen dekh kar
woh bhari barsaat mein tarse hain pani ke liye

بارش شراب عرش ہے یہ سوچ کر عدمؔ

بارش کے سب حروف کو الٹا کے پی گیا

barish sharaab arsh hai yeh soch kar adum
barish ke sab huroof ko ulta ke pi gaya

اور بازار سے کیا لے جاؤں

پہلی بارش کا مزا لے جاؤں

aur bazaar se kya le jaoon
pehli barish ka maza le jaoon

عجب پر لطف منظر دیکھتا رہتا ہوں بارش میں

بدن جلتا ہے اور میں بھیگتا رہتا ہوں بارش میں

ajab par lutaf manzar daikhta rehta hon barish mein
badan jalta hai aur mein bheegta rehta hon barish mein

ہمیں کیا معلوم تھا کہ

یہ موسم یوں رو پڑے گا

hamein kya maloom tha ke
yeh mausam yun ro parre ga

اے بارشو نہ برسو اتنا کہ جل رہا ہے کوئی کچھ تو خیال کرو

دَرد کے بِستر پہ پڑا ہوں کچا ہے میرا مُکاں کچھ تو خیال کرو

ae baaresho nah barso itna ke jal raha hai koi kuch to khayaal karo
dard ke bistar pay para hon kacha hai mera makaN kuch to khayaal karo

اب کے بارش میں تو یہ کار زیاں ہونا ہی تھا

اپنی کچی بستیوں کو بے نشاں ہونا ہی تھا

ab ke barish mein to yeh car zayan hona hi tha
apni kachi bustiyon ko be nishaa hona hi tha

۔

کل ہلکی ہلکی بارش تھی

کل سرد ہوا کا رقص بھی تھا

kal halki halki barish thi
kal sard sun-hwa ka raqs bhi tha

سہانا ہے بڑا یہ موسم برسات کا

لبھاتا ہے دل کو بڑا یہ موسم برسات کا

suhana hai bara yeh mausam barsaat ka
lubhata hai dil ko bara yeh mausam barsaat ka

‏موسم کی ادا آج بھی پر کیف ہے لیکن

اک گزری ہوئی برسات کی حسرت نہیں جاتی

mousam ki ada aaj bhi par Kaif hai lekin
ik guzri hui barsaat ki hasrat nahi jati

اے بارش برس برس اور برس

أج تو اس کی يادوں کو بہا لے جا

ae barish baras baras aur baras
aaj to is ki yaado ko baha le ja

تپش اور بڑھ گئی ہے ان چند بوندوں کے بعد

کالے سیّاہ بادل نے بھی یوں ہی بہلایا مجھے

tapish aur barh gayi hai un chand boundon ke baad
kalay Siyah baadal ne bhi yun hi bahlaya mujhe

رات بارش نے میری چھت پہ دستک لگائے رکھی

تھا لُطف چھنکار میں رات موم بتی کمرے میں جلائے رکھی

raat barish ne meri chhat pay dastak lagaye rakhi
tha lutf chhankar mein raat mom batii kamray mein jalaaye rakhi

رم جھم رم جھم برس رہی ہے

یاد تمھاری قطرا قطرا

rim jhim rim jhim baras rahi hai
yaad tumhari qatraa qatraa

بارش اور محبت دونوں ہی بہت یادگار ہوتے ہیں

فرق صرف اتنا ہے

بارش میں جسم بھیگ جاتا ہے اور محبت میں آنکھیں

barish aur mohabbat dono hi bohat yadgar hotay hain
farq sirf itna hai
barish mein jism bhiig jata hai aur mohabbat mein ankhen

بارش ہوئی تو گھر كے دریچے سے لگے ہَم ،

چپ چاپ سوگوار تمھیں سوچتے رہے

barish hui to ghar ke dareechay se lagey ham ,
chup chaap sogwaar tumhen sochte rahe

روز آتے ہیں بادل ؟ ابر رحمت لے کر ،

میرے شہر كے اعمال انہیں برسنے نہیں دیتے

roz atay hain baadal? abr rehmat le kar ,
mere shehar ke aamaal inhen baras ny nahi dety

تیری قربت بھی نہیں ہے میسر ،

اور دن بھی بارشوں كے آ گئے ہیں

teri qurbat bhi nahi hai muyassar ,
aur din bhi baarisho ke aa gaye hi



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں