2

ٹاپ 65 پروین شاکر 2 لائنز اردو نظمیں-اداس اردو شایری

پروین شاکر 24 نومبر 1952 کو کراچی ، پاکستان میں پیدا ہوئیں۔ انہیں “خوشبو اور خوابوں کی شاعرہ” کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ یہ اعزاز انہیں دوسرے شاعروں نے دیا ہے۔ بہت سارے اشعار لکھے۔

میری آنکھوں سے میرا خواب کس نے چھین لیا؟

آنکھوں نے سیپیوں سے نایاب جواہر نکالے۔

ایک خوشبو ہے جو ہوا میں تیرتی ہے۔

سوال پھولوں کا ہے ، وہ کہاں جاتے ہیں؟

پروین شاکر کو بچپن سے ہی شاعری کا شوق تھا ، کیونکہ ان کے دادا سید حسین عسکری اور والد سید شاکر علی نے بھی انہیں شاعر کہا تھا۔ ان کا پہلا مجموعہ نظم 1976 میں شائع ہوا۔ اس واقعہ کو بڑے پیمانے پر سراہا گیا۔ ان کے دیگر شعری مجموعوں میں شامل ہیں: 1980 میں “صد برگ” ، 1985 میں “کڈکلامی” ، 1990 میں “انکار” ، اور 1994 میں 3 ماہ۔ پروین شاکر وہ ایک ذہین طالبہ ہے ، اس نے انگریزی ادب میں ماسٹر ڈگری حاصل کی ہے۔ ہارورڈ یونیورسٹی اس نے بزنس ایڈمنسٹریشن میں ماسٹر ڈگری بھی حاصل کی ہے اور تقریبا 9 9 سال تک استاد رہے۔ سی ایس ایس امتحان پاس کیا ، دوسری پوزیشن حاصل کی ، اور تربیت کے بعد کسٹم ڈیپارٹمنٹ میں داخل ہوا۔ ان معاہدوں کے باوجود وہ نظمیں لکھتا رہا۔ اس کی شادی پاکستان کے ڈاکٹر سید ناصر سے ہوئی ہے اور اس کا ایک بیٹا ہے جس کا نام سید مراد علی ہے۔ شادی زیادہ دیر تک نہیں چل سکی ، اور وہ الگ ہوگئے۔

پلٹ کر پھر یہیں آ جائیں گے ہم

وہ دیکھے تو ہمیں آزاد کر کے

palat kar phir yahin aa jayen ge hum

woh dekhe to hamein azad kar ke

وہ تو خوش بو ہے ہواؤں میں بکھر جائے گا

مسئلہ پھول کا ہے پھول کدھر جائے گا

woh to khush bo hai hawaon mein bikhar jaye ga

masla phool ka hai phool kidhar jaye ga

جنگ کا ہتھیار طے کچھ اور تھا 

تیر سینے میں اتارا اور ہے

jung ka hathyaar tay kuch aur tha

teer seenay mein utaara aur hai

غیر ممکن ہے ترے گھر کے گلابوں کا شمار 

میرے رستے ہوئے زخموں کے حسابوں کی طرح

ghair mumkin hai tre ghar ke gulabon ka shumaar
mere raste hue zakhamo ke hsabon ki terhan

صرف اس تکبر میں اس نے مجھ کو جیتا تھا 

ذکر ہو نہ اس کا بھی کل کو نارساؤں میں

sirf is taqqabur mein is ne mujh

ko jeeta tha
zikar ho nah is ka bhi kal ko nar

saon  mein

اسی طرح سے اگر چاہتا رہا پیہم 

سخن وری میں مجھے انتخاب کر دے گا

isi terhan se agar chahta raha pihm
sukhan wari mein mujhe intikhab kar day ga

ہتھیلیوں کی دعا پھول بن کے آئی ہو 

کبھی تو رنگ مرے ہاتھ کا حنائی ہو

hathelion ki dua phool ban ke aayi ho
kabhi to rang marey haath ka hinaa_ii ho

میری چادر تو چھنی تھی شام کی تنہائی میں 

بے ردائی کو مری پھر دے گیا تشہیر کون

meri chadar to chaanni thi shaam ki tanhai mein
be darai ko meri phir day gaya tashheer kon

تیرے تحفے تو سب اچھے ہیں مگر موج بہار 

اب کے میرے لیے خوشبوئے حنا آئی ہو

tairay tohfay to sab achay hain magar mouj bahhar
ab ke mere liye khusho-e hina aay

مقتل وقت میں خاموش گواہی کی طرح 

دل بھی کام آیا ہے گمنام سپاہی کی طرح

maqtal waqt mein khamosh gawahi ki terhan
dil bhi kaam aaya hai gumnaam sipahi ki terhan

گلابی پاؤں مرے چمپئی بنانے کو 

کسی نے صحن میں مہندی کی باڑ اگائی ہو

gulaabii paon marey champai bananay ko
kisi ne sehan mein mehndi ki baar ugai ho

تیرا گھر اور میرا جنگل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

ایسی برساتیں کہ بادل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

tera ghar aur mera jungle bheegta hai sath sath
aisi barastein ke baadal bheegta hai sath sath

پا بہ گل سب ہیں رہائی کی کرے تدبیر کون

دست بستہ شہر میں کھولے مری زنجیر کون

pa bah Gul sab hain rihayi ki kere tadbeer kon

dast basta shehar mein khole meri zanjeer kon

آمد پہ تیری عطر و چراغ و سبو نہ ہوں

اتنا بھی بود و باش کو سادہ نہیں کیا

aamad pay teri itar o chairag o subu nah hon
itna bhi bood o baash ko saada nahi kya

حسن کے سمجھنے کو عمر چاہیئے جاناں

دو گھڑی کی چاہت میں لڑکیاں نہیں کھلتیں

husn ke samajhney ko Umar chahiye janan

do ghari ki chahat mein larkiyan nahi khiltin

میں سچ کہوں گی مگر پھر بھی ہار جاؤں گی

وہ جھوٹ بولے گا اور لا جواب کر دے گا

mein sach kahoon gi magar phir bhi haar jaoon gi
woh jhoot bolay ga aur laa jawab kar day ga

وہ نہ آئے گا ہمیں معلوم تھا اس شام بھی

انتظار اس کا مگر کچھ سوچ کر کرتے رہے

woh nah aaye ga hamein maloom tha is shaam bhi

intzaar is ka magar kuch soch kar karte rahay

اتنے گھنے بادل کے پیچھے

کتنا تنہا ہوگا چاند

itnay ghany baadal ke peechay

kitna tanha hoga chaand

کیسے کہہ دوں کہ مجھے چھوڑ دیا ہے اس نے

 

بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائی کی

kaisay keh dun ke mujhe chore diya hai is ne

baat to sach hai magar baat hai ruswai ki

اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے

جاگ اٹھتی ہیں عجب خواہشیں انگڑائی کی

ab bhi barsaat ki raton mein badan toot-ta hai

jaag uthti hain ajab khuwaishe angrai ki

چلنے کا حوصلہ نہیں رکنا محال کر دیا

عشق کے اس سفر نے تو مجھ کو نڈھال کر دیا

chalne ka hosla nahi rukna mahaal kar diya

ishhq ke is safar ne to mujh ko nidhaal kar diya

اک نام کیا لکھا ترا ساحل کی ریت پر

پھر عمر بھر ہوا سے میری دشمنی رہی

ik naam kya likha tra saahil ki rait par

phir Umar bhar hwa se meri dushmani rahi

دشمنوں کے ساتھ میرے دوست بھی آزاد ہیں

دیکھنا ہے کھینچتا ہے مجھ پہ پہلا تیر کون

dushmanon ke sath mere dost bhi azad hain

dekhna hai khinchtaa hai mujh pay pehla teer kon

رات کے شاید ایک بجے ہیں

سوتا ہوگا میرا چاند

raat ke shayad aik bujey hain

sota hoga mera chaand


ہم تو سمجھے تھے کہ اک زخم ہے بھر جائے گا

کیا خبر تھی کہ رگ جاں میں اتر جائے گا

hum to samjhay thay ke ik zakham hai bhar jaye ga

kya khabar thi ke rigg jaan mein utar jaye ga


کچھ تو ہوا بھی سرد تھی کچھ تھا ترا خیال بھی

دل کو خوشی کے ساتھ ساتھ ہوتا رہا ملال بھی

kuch to hwa bhi sard thi kuch tha tra khayaal bhi

dil ko khushi ke sath sath hota raha malaal bhi


وہ مجھ کو چھوڑ کے جس آدمی کے پاس گیا

برابری کا بھی ہوتا تو صبر آ جاتا

woh mujh ko chore ke jis aadmi ke paas gaya

barabari ka bhi hota to sabr aa jata


یوں بچھڑنا بھی بہت آساں نہ تھا اس سے مگر

جاتے جاتے اس کا وہ مڑ کر دوبارہ دیکھنا

yun bicharna bhi bohat aasan nah tha is se magar

jatay jatay is ka woh murr kar dobarah dekhna

بس یہ ہوا کہ اس نے تکلف سے بات کی

اور ہم نے روتے روتے دوپٹے بھگو لئے

bas yeh hwa ke is ne takalouf se baat ki

aur hum ne rotay rotay dupattay bigho liye


کچھ تو ترے موسم ہی مجھے راس کم آئے

اور کچھ مری مٹی میں بغاوت بھی بہت تھی

kuch to tre mausam hi mujhe raas kam aaye

aur kuch meri matti mein baghaawat bhi bohat thi


میں پھول چنتی رہی اور مجھے خبر نہ ہوئی

وہ شخص آ کے مرے شہر سے چلا بھی گیا

mein phool chunti rahi aur mujhe khabar nah hui

woh shakhs aa ke marey shehar se chala bhi gaya

بات وہ آدھی رات کی رات وہ پورے چاند کی

چاند بھی عین چیت کا اس پہ ترا جمال بھی

baat woh aadhi raat ki raat woh poooray chaand ki

chaand bhi ain cheet ka is pay tra jamal bhi

وہ کہیں بھی گیا لوٹا تو مرے پاس آیا

بس یہی بات ہے اچھی مرے ہرجائی کی

woh kahin bhi gaya lota to marey paas aaya

bas yahi baat hai achi marey herjaai ki

بارہا تیرا انتظار کیا

اپنے خوابوں میں اک دلہن کی طرح

baarha tera intzaar kya

apne khowaboon mein ik dulhan ki terhan


لڑکیوں کے دکھ عجب ہوتے ہیں سکھ اس سے عجیب

ہنس رہی ہیں اور کاجل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

larkiyon ke dukh ajab hotay hain sukh is se ajeeb

hans rahi hain aur kajal bheegta hai sath sath


دینے والے کی مشیت پہ ہے سب کچھ موقوف

 

مانگنے والے کی حاجت نہیں دیکھی جاتی

dainay walay ki Mushiyat pay hai sab kuch moqoof

mangnay walay ki haajat nahi dekhi jati


کمال ضبط کو خود بھی تو آزماؤں گی

میں اپنے ہاتھ سے اس کی دلہن سجاؤں گی

kamaal zabt ko khud bhi to aazmaon gi

mein apne haath se is ki dulhan sajaun gi


بہت سے لوگ تھے مہمان میرے گھر لیکن

وہ جانتا تھا کہ ہے اہتمام کس کے لئے

bohat se log thay maheman mere ghar lekin

woh jaanta tha ke hai ihtimaam kis ke liye


کانپ اٹھتی ہوں میں یہ سوچ کے تنہائی میں

میرے چہرے پہ ترا نام نہ پڑھ لے کوئی

kanp uthti hon mein yeh soch ke tanhai mein

mere chehray pay tra naam nah parh le koi


ایک سورج تھا کہ تاروں کے گھرانے سے اٹھا

آنکھ حیران ہے کیا شخص زمانے سے اٹھا

aik Sooraj tha ke taron ke gharane se utha

aankh heran hai kya shakhs zamane se utha


یہی وہ دن تھے جب اک دوسرے کو پایا تھا

ہماری سالگرہ ٹھیک اب کے ماہ میں ہے

yahi woh din thay jab ik dosray ko paaya tha

hamari saalgirah theek ab ke mah mein hai


عکس خوشبو ہوں بکھرنے سے نہ روکے کوئی

اور بکھر جاؤں تو مجھ کو نہ سمیٹے کوئی

aks khushbu hon bikharne se nah rokay koi

aur bikhar jaoon to mujh ko nah samete koi



اس کے یوں ترک محبت کا سبب ہوگا کوئی

جی نہیں یہ مانتا وہ بے وفا پہلے سے تھا

is ke yun tark mohabbat ka sabab hoga koi
jee nahi yeh maanta woh be wafa pehlay se tha

جس طرح خواب مرے ہو گئے ریزہ ریزہ

اس طرح سے نہ کبھی ٹوٹ کے بکھرے کوئی

jis terhan khawab marey ho gaye rezah rezah

is terhan se nah kabhi toot ke bikhare koi


رائے پہلے سے بنا لی تو نے

دل میں اب ہم ترے گھر کیا کرتے

raye pehlay se bana li to ne

dil mein ab hum tre ghar kya karte


ممکنہ فیصلوں میں ایک ہجر کا فیصلہ بھی تھا

ہم نے تو ایک بات کی اس نے کمال کر دیا

mumkina faislon mein aik hijar ka faisla bhi tha

hum ne to aik baat ki is ne kamaal kar diya


اپنے قاتل کی ذہانت سے پریشان ہوں میں

روز اک موت نئے طرز کی ایجاد کرے

apne qaatil ki zahanat se pareshan hon mein

roz ik mout naye tarz ki ijaad kere


ہارنے میں اک انا کی بات تھی

جیت جانے میں خسارا اور ہے

harnay mein ik anaa ki baat thi

jeet jane mein khasaara aur hai


میں اس کی دسترس میں ہوں مگر وہ

مجھے میری رضا سے مانگتا ہے

mein is ki dustarus mein hon magar woh

mujhe meri Raza se mangta hai

اس نے مجھے دراصل کبھی چاہا ہی نہیں تھا

خود کو دے کر یہ بھی دھوکا، دیکھ لیا ہے

is ne mujhe darasal kabhi chaha hi nahi tha

khud ko day kar yeh bhi dhoka, dekh liya hai


جگنو کو دن کے وقت پرکھنے کی ضد کریں

بچے ہمارے عہد کے چالاک ہو گئے

jugno ko din ke waqt parkhnay ki zid karen

bachay hamaray ehad ke chalaak ho gaye


پاس جب تک وہ رہے درد تھما رہتا ہے

پھیلتا جاتا ہے پھر آنکھ کے کاجل کی طرح

paas jab tak woh rahay dard thama rehta hai

phialta jata hai phir aankh ke kajal ki terhan


کل رات جو ایندھن کے لیے کٹ کے گرا ہے

چڑیوں کو بہت پیار تھا اس بوڑھے شجر سے

kal raat jo eendhan ke liye kat ke gira hai

chiryon ko bohat pyar tha is boorhay shajar se


کانٹوں میں گھرے پھول کو چوم آئے گی لیکن

تتلی کے پروں کو کبھی چھلتے نہیں دیکھا

kaanton mein ghiry phool ko choom aaye gi lekin

titlee ke paron ko kabhi chilte nahi dekha


ہاتھ میرے بھول بیٹھے دستکیں دینے کا فن

بند مجھ پر جب سے اس کے گھر کا دروازہ ہوا

haath mere bhool baithy dastaken dainay ka fun

band mujh par jab se is ke ghar ka darwaaza hva


کبھی کبھار اسے دیکھ لیں کہیں مل لیں

یہ کب کہا تھا کہ وہ خوش بدن ہمارا ہو

kabhi kabhar usay dekh len kahin mil len

yeh kab kaha tha ke woh khush badan hamara ho


دروازہ جو کھولا تو نظر آئے کھڑے وہ

حیرت ہے مجھے آج کدھر بھول پڑے وہ

darwaaza jo khoola to nazar aaye kharray woh

herat hai mujhe aaj kidhar bhool parre woh


تو بدلتا ہے تو بے ساختہ میری آنکھیں

اپنے ہاتھوں کی لکیروں سے الجھ جاتی ہیں

to badalta hai to be sakhta meri ankhen

apne hathon ki lakiron se ulajh jati hain

ابر برسے تو عنایت اس کی

شاخ تو صرف دعا کرتی ہے

abr barsay to inayat is ki

shaakh to sirf dua karti hai


کچھ فیصلہ تو ہو کہ کدھر جانا چاہئے

پانی کو اب تو سر سے گزر جانا چاہئے

kuch faisla to ho ke kidhar jana chahiye

pani ko ab to sir se guzar jana chahiye


کو بہ کو پھیل گئی بات شناسائی کی

اس نے خوشبو کی طرح میری پذیرائی کی

ko bah ko phail gayi baat shanasaai ki

is ne khushbu ki terhan meri pazeerai ki


تجھے مناؤں کہ اپنی انا کی بات سنوں

الجھ رہا ہے مرے فیصلوں کا ریشم پھر

tujhe manao ke apni anaa ki baat sunon

ulajh raha hai marey faislon ka resham phir


گواہی کیسے ٹوٹتی معاملہ خدا کا تھا

مرا اور اس کا رابطہ تو ہاتھ اور دعا کا تھا

gawahi kaisay tuutatii maamla kkhuda ka tha

mra aur is ka rabita to haath aur dua ka tha


کون جانے کہ نئے سال میں تو کس کو پڑھے

تیرا معیار بدلتا ہے نصابوں کی طرح

kon jane ke naye saal mein to kis ko parhay

tera miyaar badalta hai nsabon ki terhan


میری طلب تھا ایک شخص وہ جو نہیں ملا تو پھر

ہاتھ دعا سے یوں گرا بھول گیا سوال بھی

meri talabb tha ak shakhs woh jo nahi mila to phir

haath dua se yun gira bhool gaya sawal bhi


سپرد کر کے اسے چاندنی کے ہاتھوں میں

میں اپنے گھر کے اندھیروں کو لوٹ آؤں گی

supurd kar ke usay chandni ke hathon mein

mein –apne ghar ke andheron ko lout aon gi


مسئلہ جب بھی چراغوں کا اٹھا

فیصلہ صرف ہوا کرتی ہے

masla jab bhi charaghoon ka utha

faisla sirf hwa karti hai


اپنی رسوائی ترے نام کا چرچا دیکھوں

اک ذرا شعر کہوں اور میں کیا کیا دیکھوں

apni ruswai tre naam ka charcha daikhon

ik zara shair kahoon aur mein kya kya daikhon


میرے چہرے پہ غزل لکھتی گئیں

شعر کہتی ہوئی آنکھیں اس کی

mere chehray pay ghazal likhti gayeen

shair kehti hui ankhen is ki



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں