2

وڈا 2 لائنز اردو شاعری-وعدہ 2 لائنز اردو شایری۔



💞♥وعدے مُحبت کے _ مُجھے کرنے نہیں آتے💞

💞ایک زندگی ھے _ جب جی چاہے مانگ لینا💞

️wady mohabbat ke _ mujhe karne nahi atay
aik zindagi he _ jab jee chahay maang lena


عادتاً تم نے کر دیے وعدے

عادتاً ہم نے اعتبار کیا

aadtan tum ne kar diye waday
aadtan hum ne aitbaar kya

نہ کوئی وعدہ نہ کوئی یقیں نہ کوئی امید

مگر ہمیں تو ترا انتظار کرنا تھا

nah koi wada nah koi yaqeen nah koi umeed
magar hamein to tra intzaar karna tha

ترے وعدوں پہ کہاں تک مرا دل فریب کھائے

کوئی ایسا کر بہانہ مری آس ٹوٹ جائے

tre wadon pay kahan tak mra dil fraib khaye
koi aisa kar bahana meri aas toot jaye

کیوں پشیماں ہو اگر وعدہ وفا ہو نہ سکا

کہیں وعدے بھی نبھانے کے لئے ہوتے ہیں

kyun pasheman ho agar wada wafa ho nah saka
kahin waday bhi nibhanay ke liye hotay hain

غضب کیا ترے وعدے پہ اعتبار کیا

تمام رات قیامت کا انتظار کیا

gazabb kya tre waday pay aitbaar kya
tamam raat qayamat ka intzaar kya

ایک اک بات میں سچائی ہے اس کی لیکن

اپنے وعدوں سے مکر جانے کو جی چاہتا ہے

aik ik baat mein sachaai hai is ki lekin
apne wadon se makr jane ko jee chahta hai

تیری مجبوریاں درست مگر

تو نے وعدہ کیا تھا یاد تو کر

teri majboriyan durust magar
to ne wada kya tha yaad to kar

وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

وہی یعنی وعدہ نباہ کا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

woh jo hum mein tum mein qarar tha

tumhe yaad ho ke nah yaad ho

wohi yani wada nibaah ka

tumhe yaad ho ke nah yaad ho

اب تم کبھی نہ آؤ گے یعنی کبھی کبھی

رخصت کرو مجھے کوئی وعدہ کیے بغیر

ab tum kabhi nah aao ge yani kabhi kabhi
rukhsat karo mujhe koi wada kiye baghair

ترے وعدے پر جیے ہم تو یہ جان جھوٹ جانا

کہ خوشی سے مر نہ جاتے اگر اعتبار ہوتا

tre waday par jie hum to yeh jaan jhoot jana
ke khushi se mar nah jatay agar aitbaar hota

دن گزارا تھا بڑی مشکل سے

پھر ترا وعدۂ شب یاد آیا

din guzaraa tha barri mushkil se
phir tra wada shab yaad aaya

پھر بیٹھے بیٹھے وعدۂ وصل اس نے کر لیا

پھر اٹھ کھڑا ہوا وہی روگ انتظار کا

phir baithy baithy wada wasal is ne kar liya
phir uth khara  hwa wohi rog intzaar ka

میں اس کے وعدے کا اب بھی یقین کرتا ہوں

ہزار بار جسے آزما لیا میں نے

mein is ke waday ka ab bhi yaqeen karta hon
hazaar baar jisay aazma liya mein ne

تیرے وعدے کو کبھی جھوٹ نہیں سمجھوں گا

آج کی رات بھی دروازہ کھلا رکھوں گا

tairay waday ko kabhi jhoot nahi samjhun ga
aaj ki raat bhi darwaaza khula rakhon ga


امید تو بندھ جاتی تسکین تو ہو جاتی

وعدہ نہ وفا کرتے وعدہ تو کیا ہوتا

umeed to bndh jati taskeen to ho jati
wada nah wafa karte wada to kya hota

میں بھی حیران ہوں اے داغؔ کہ یہ بات ہے کیا

وعدہ وہ کرتے ہیں آتا ہے تبسم مجھ کو

mein bhi heran hon ae dagh ke yeh baat hai kya
wada woh karte hain aata hai tabassum mujh ko

ثبوت ہے یہ محبت کی سادہ لوحی کا

جب اس نے وعدہ کیا ہم نے اعتبار کیا

saboot hai yeh mohabbat ki saada loohi ka
jab is ne wada kya hum ne aitbaar kya

تھا وعدہ شام کا مگر آئے وہ رات کو

میں بھی کواڑ کھولنے فوراً نہیں گیا

tha wada shaam ka magar aaye woh raat ko mein bhi kiwar kholnay foran nahi gaya

پھر چاہے تو نہ آنا او آن بان والے

جھوٹا ہی وعدہ کر لے سچی زبان والے

phir chahay to nah aana o aan baan walay
jhoota hi wada kar le sachhi zabaan walay

وہ امید کیا جس کی ہو انتہا

وہ وعدہ نہیں جو وفا ہو گیا

woh umeed kya jis ki ho intahaa
woh wada nahi jo wafa ho gaya

آپ تو منہ پھیر کر کہتے ہیں آنے کے لیے

وصل کا وعدہ ذرا آنکھیں ملا کر کیجیے

aap to mun phair kar kehte hain anay ke liye
wasal ka wada zara ankhen mila kar kiijiye

برسوں ہوئے نہ تم نے کیا بھول کر بھی یاد

وعدے کی طرح ہم بھی فراموش ہو گئے

barson hue nah tum ne kya bhool kar bhi yaad
waday ki terhan hum bhi faramosh ho gaye

کس منہ سے کہہ رہے ہو ہمیں کچھ غرض نہیں

کس منہ سے تم نے وعدہ کیا تھا نباہ کا

kis mun se keh rahay ho hamein kuch gharz nahi
kis mun se tum ne wada kya tha nibaah ka

اور کچھ دیر ستارو ٹھہرو

اس کا وعدہ ہے ضرور آئے گا

aur kuch der sitaro thehro
is ka wada hai zaroor aaye ga


جھوٹے وعدے بھی نہیں کرتے آپ

کوئی جینے کا سہارا ہی نہیں

jhutay waday bhi nahi karte aap
koi jeeney ka sahara hi nahi

آپ نے جھوٹا وعدہ کر کے

آج ہماری عمر بڑھا دی

aap ne jhoota wada kar ke
aaj hamari Umar barha di

وہ پھر وعدہ ملنے کا کرتے ہیں یعنی

ابھی کچھ دنوں ہم کو جینا پڑے گا

woh phir wada milnay ka karte hain yani
abhi kuch dinon hum ko jeena parre ga

ایک مدت سے نہ قاصد ہے نہ خط ہے نہ پیام

اپنے وعدے کو تو کر یاد مجھے یاد نہ کر

aik muddat se nah qasid hai nah khat hai nah payam
apne waday ko to kar yaad mujhe yaad nah kar

ان وفاداری کے وعدوں کو الٰہی کیا ہوا

وہ وفائیں کرنے والے بے وفا کیوں ہو گئے

un wafadaari ke wadon ko Ellahi kya sun-hwa
woh wafayen karne walay be wafa kyun ho gaye

بھولنے والے کو شاید یاد وعدہ آ گیا

مجھ کو دیکھا مسکرایا خود بہ خود شرما گیا

bhoolnay walay ko shayad yaad wada aa gaya
mujh ko dekha muskuraya khud bah khud sharmaa gaya

وعدہ جھوٹا کر لیا چلئے تسلی ہو گئی

ہے ذرا سی بات خوش کرنا دل ناشاد کا

wada jhoota kar liya chlye tasalii ho gayi
hai zara si baat khush karna dil Nashad ka

صاف انکار اگر ہو تو تسلی ہو جائے

جھوٹے وعدوں سے ترے رنج سوا ہوتا ہے

saaf inkaar agar ho to tasalii ho jaye
jhutay wadon se tre ranj siwa hota hai

مجھے ہے اعتبار وعدہ لیکن

تمہیں خود اعتبار آئے نہ آئے

mujhe hai aitbaar wada lekin tumhe khud aitbaar aaye nah aaye



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں