2

ٹاپ 30 یاد 2 لائنز اردو شاعری غائب اردو شایری۔

ہماری شخصیت کا حصہ ہماری یادداشت ہے۔ اگر ہم نہیں جانتے کہ ہم کون ہیں ، ہم اس دنیا میں کیا کرتے ہیں ، ہمارا نقطہ آغاز اور ہماری زندگی کے روز مرہ کے معاملات کیا ہیں ، ہم زندہ نہیں رہ سکتے۔ وہ شخص ہمارے ساتھ رہتا ہے یا ہمارے ساتھ پڑھتا ہے یا ہمارے ساتھ پڑھتا ہے یا ہمارے ساتھ کام کرتا ہے یا کسی کے ساتھ جو ہم پسند کرتے ہیں ہمارے دل اس کے پاس بیٹھتے ہیں اس سے بات کرتے ہیں اور اس کے ساتھ وقت گزارتے ہیں اچانک کوئی بات نہیں چاہے وہ ہمیں چھوڑ دے یا ہم چھوڑ دیں اسے ، ہم اسے بہت یاد کرتے ہیں اور سوچتے ہیں کہ وہ ہمیں اسی طرح یاد رکھے گا اور اسی طرح ہمیں دیکھے گا۔ جب ہم اسے یاد کرتے ہیں تو ماہرین کہتے ہیں کہ جب ہم کسی کو سختی سے یاد کرتے ہیں تو ہمارا دل اس شخص کے دل کو جگا دے گا چاہے وہ کتنا ہی مصروف کیوں نہ ہو۔جی ہاں

اردو میں یاد کا لفظ عام طور پر ماضی میں استعمال ہوتا ہے ، یعنی یادت۔ یادگار نظموں میں یادیں ، یادداشتیں ، یادیں اور مختلف جذبات اور جذبات کی یادیں شامل ہیں۔

یہ جگہ، یہ مقام شاعرانہ نیٹ ورکآپ کے لیے بہت سی نظمیں ہیں ، اور مجھے آپ کے تاثرات کی ضرورت ہے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ آپ ہمارے نظموں کے یادگار مجموعے سے لطف اندوز ہوں گے اور اس مجموعے میں شامل کرنے کے لیے ہمیں اپنی رائے دیں۔

اپنے لیے یادوں کی نظموں سے لطف اٹھائیں اور ان لوگوں کے ساتھ شیئر کریں جو آپ کو یاد ہیں۔

شاعرانہ نیٹ ورک جن اشعار کی تلاوت کی ضرورت ہے انہیں باقاعدگی سے اپ ڈیٹ کیا جائے گا۔ کسی شخص کے لیے آپ کو وہاں چھوڑنا تکلیف دہ ہے جہاں آپ کو سب سے زیادہ ضرورت ہو۔ آپ اسے یاد کرتے رہیں ، اسے یاد نہیں کرتے۔ان کے درمیان نظمیں بڑے پیمانے پر پڑھی جاتی ہیں ، ان کے پیاروں کے پیچھے رہ جاتی ہیں۔

جب دو نشانیاں ہوں تو سمجھ لیں کہ جس شخص سے آپ محبت کرتے ہیں وہ آپ کو یاد کر رہا ہے۔ پہلا یہ کہ جب آپ کسی کام میں مصروف ہوں اور اچانک اس کے بارے میں سوچیں ، کسی نہ کسی طرح اس شخص کا نام جسے آپ یاد نہیں رکھنا چاہتے آپ کی زبان پر ظاہر ہو جائے گا۔

ذرا سا ہٹ کے چلتا ہوں زمانے کی روایت سے

کہ جن پہ بوجھ ڈالا ہو وہ کندھے یاد رکھتا ہوں

zara sa hatt ke chalta hon zamane

ki riwayat se

ke jin pay boojh dala ho woh kandhay

yaad rakhta hon

ایک نسل۔

ذرا سا ہٹ کے چلتا ہوں زمانے کی روایت سے

کہ جن پہ بوجھ ڈالا ہو وہ کندھے یاد رکھتا ہوں

zara sa hatt ke chalta hon zamane ki riwayat se
ke jin pay boojh dala ho woh kandhay yaad rakhta hon

کر رہا تھا غم جہاں کا حساب

آج تم یاد بے حساب آئے

kar raha tha gham jahan ka hisaab
aaj tum yaad be hisaab aaye

تھک گیا ہے دل وحشی مرا فریاد سے بھی

جی بہلتا نہیں اے دوست تری یاد سے بھی

thak gaya hai dil wehshi mra faryaad se bhi
jee behalta nahi ae dost tri yaad se bhi

چہرہ و نام ایک ساتھ آج نہ یاد آ سکے

وقت نے کس شبیہ کو خواب و خیال کر دیا

chehra o naam aik sath aaj nah yaad aa sakay
waqt ne kis Shabeeh ko khawab o khayaal kar diya

چلنے کا حوصلہ نہیں رکنا محال کر دیا

عشق کے اس سفر نے تو مجھ کو نڈھال کر دیا

chalne ka hosla nahi rukna mahaal kar diya
ishhq ke is safar ne to mujh ko nidhaal kar diya

وفا کی کون سی منزل پہ اس نے چھوڑا تھا

کہ وہ تو یاد ہمیں بھول کر بھی آتا ہے

wafa ki kon si manzil pay is ne chorra tha
ke woh to yaad hamein bhool kar bhi aata hai

اب تک مری یادوں سے مٹائے نہیں مٹتا

بھیگی ہوئی اک شام کا منظر تری آنکھیں

ab tak meri yaado se mitaye nahi mitta
bheegi hui ik shaam ka manzar tri ankhen

ہوتی ہوگی میرے بوسے کی طلب میں پاگل

جب بھی زلفوں میں کوئی پھول سجاتی ہوگی

hoti hogi mere bosay ki talabb mein pagal
jab bhi zulfon mein koi phool sajate hogi

اداسیوں سے وابستہ ہے یہ زندگی میری وصی

خدا گواہ ہے کے پھر بھی تجھے یاد کرتے ہیں

udasiyoon se wabasta hai yeh zindagi meri wasii
kkhuda gawah hai ke phir bhi tujhe yaad karte hain

کون روتا ہے یہاں رات کے سناٹے میں

میرے جیسا ہے کوئی عشق کا مارا ہوگا

kon rota hai yahan raat ke sannaate mein
mere jaisa hai koi ishhq ka mara hoga

آنکھوں سے مری اس لیے لالی نہیں جاتی

یادوں سے کوی رات کھالی نہیں جاتی

aankhon se meri is liye laali nahi jati
yaado se kawi raat khalee nahi jati

اداس راتوں میں تیز کافی کی تلخیوں میں

وہ کچھ زیادہ ہی یاد آتا ہے سردیوں میں

udaas raton mein taiz kaafi ki talkhioun mein
woh kuch ziyada hi yaad aata hai sardiyoon mein

آنکھوں میں چبھ گئیں تری یادوں کی کرچیاں

کاندھوں پہ غم کی شال ہے اور چاند رات ہے

aankhon mein chubh gayeen tri yaado ki kirchiyaan
kandhon pay gham ki shaal hai aur chaand raat hai

مجھے خبر تھی کہ اب لوٹ کر نہ آؤں گا

سو تجھ کو یاد کیا دل پہ وار کرتے ہوئے

mujhe khabar thi ke ab lout kar nah aon ga
so tujh ko yaad kya dil pay waar karte hue

جیسے ہو عمر بھر کا اثاثہ غریب کا

کچھ اس طرح سے میں نے سنبھالے تمہارے خط

jaisay ho Umar bhar ka asasa ghareeb ka
kuch is terhan se mein ne sambhale tumahray khat

اس جدائی میں تم اندر سے بکھر جاؤ گے

کسی معذور کو دیکھو گے تو یاد آؤں گا

is judai mein tum andar se bikhar jao ge
kisi mazoor ko dekho ge to yaad aon ga

میں لوگوں سے مُلاقاتوں کے لمحے یاد رکھتا ہوں

باتیں بُھول بھی جاؤں پر لحہجے یاد رکھتا ہوں

mein logon se mulakaton ke lamhay yaad rakhta hon
baatein bhool bhi jaoon par lehjay yaad rakhta hon

میں جو بولا کہا کہ یہ آواز

اسی خانہ خراب کی سی ہے

mein jo bola kaha ke yeh aawaz
isi khanah kharab ki si hai

کون کہتا ہے نہ غیروں پہ تم امداد کرو

ہم فراموشیوں کو بھی کبھو یاد کرو

kon kehta hai nah gheiron pay tum imdaad karo
hum faramoshiyun ko bhi kabho yaad karo

اک دلاسہ ہے روح کو ورنہ

کیا نکلتا ہے تیری یادوں سے

ik dilasa hai rooh ko warna
kya nikalta hai teri yaado se

میں اکثر ہاتھ ہونٹوں سے لگا کر چوم لیتا ہوں

کبھی جب یاد آتا ہے تمھارا تھامنا ان کو

mein aksar haath honton se laga kar choom laita hon
kabhi jab yaad aata hai tumahra thamna un ko

اس زندگی مِیں اتنی فراغت کِسے نصیب

اتنا نہ یاد آ کہ تُجھے بھول جائیں ہم

is zindagi mein itni faraghat kisay naseeb
itna nah yaad aa ke tujhe bhool jayen hum

دل پر لگا اُلٹ کے وہیں تیر آہ کا

جو یاد آگیا وہ پلٹنا نگاہ کا

dil par laga ulat ke wahein teer aah ka
jo yaad agaya woh palatna nigah ka

اک وہ ہیں جنہیں یاد نہیں قصہ ماضی ،

اک ہم ہیں ابھی بھی پہلی ملاقات نہیں بھولے

ik woh hain jinhein yaad nahi qissa maazi ,
ik hum hain abhi bhi pehli mulaqaat nahi bhoolay

جتنا تجھے کسی نے چاہا بھی نا ہو گا ،

اتنا تو میں نے صرف تجھے یاد کیا ہے

jitna tujhe kisi ne chaha bhi na ho ga ,
itna to mein ne sirf tujhe yaad kya hai

کرتا تو ہے وہ یاد مجھے چاہت سے مگر ،

ہوتا ہے یہ کمال بڑی مدتوں كے بعد

karta to hai woh yaad mujhe chahat se magar ,
hota hai yeh kamaal barri muddaton ke baad

ساری حدیں درد کی پار کر دیتے ہیں ،

تیری یاد اور تنہائی جب مل بیٹھتے ہیں

saari hade dard ki paar kar dete hain ,
teri yaad aur tanhai jab mil baithtay hain

محبت ہماری بھی اثر رکھتی ہے ،

بہت یاد آئینگے ذرا بھول کر تو دیکھو

mohabbat hamari bhi assar rakhti hai ,
bohat yaad aaenge zara bhool kar to dekho

تم یاد نہیں کرتے تو ہم گلہ کیوں کریں ،

خاموشی بھی تو اک ادا ہے محبت نبھانے کی

tum yaad nahi karte to hum gilah kyun karen ,
khamoshi bhi to ik ada hai mohabbat nibhanay ki



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں