2

فیض احمد فیض اردو نظمیں 2 سطریں۔

فیض احمد فیض 13 فروری 1911 کو سیالکوٹ میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد سلطان محمد خان ایک تعلیم یافتہ اور وکیل تھے۔ بچپن میں ، فیض احمد فیض اپنے گھر کے قریب ایک حویلی کے مالک تھے اور باقاعدہ شاعری پڑھتے تھے۔ فیض احمد فیض نے وہاں سے شاعری کا شوق بھی پیدا کیا اور اپنی پہلی نظم دسویں جماعت میں لکھی۔ میر مولوی شمس الحق بھی علامہ اقبال کے استاد ہیں ، اور وہ سیالکوٹ سے آئے تھے۔ آپ بھی سیکھنے کے لیے اس کی پیروی کریں۔ انہوں نے لاہور گورنمنٹ کالج سے بیچلر کی ڈگری حاصل کی ، اور پھر 1932 میں ان سے انگریزی میں ماسٹر ڈگری حاصل کی۔ اورینٹل اکیڈمی۔لاہور سے عربی۔ اچھا 1935 کیا ہے؟ وزارت زراعت امرتسر کالج میں انگریزی لیکچرر کے طور پر خدمات انجام دیں ، فیض احمد فیض 1941 میں برطانوی شہری بن گئے۔جارج انہوں نے 1942 میں بطور کپتان فوج میں شمولیت اختیار کی ، 1943 میں میجر بنے ، اور پھر 1944 میں لیفٹیننٹ کرنل بنے۔1947۔میں نے پہلی کشمیر جنگ کے بعد استعفیٰ دے دیا اور لاہور منتقل ہو گیا۔تئیسفروری 1951 میں فیض احمد فیض اور دیگر نے لیاقت علی خان کی حکومت کا تختہ الٹنے کی سازش کا منصوبہ بنانے کے لیے چیف آف سٹاف میجر جنرل اکبر خان کے گھر پر ایک خفیہ میٹنگ کی۔انہیں حکومت نے 9 مارچ 1951 کو گرفتار کیا اور 12 اپریل 1955 تک جیل میں رہے جس کے بعد انہیں لندن منتقل کر دیا گیا۔ لینن امن۔ فیض احمد فیض نے یہ ایوارڈ بھی حاصل کیا اور 1964 میں چین واپس آئے اور کراچی کے عبداللہ ہالونگ کالج کے پرنسپل بنے۔ 1984 میں فیض احمد فیض کو نوبل انعام کے لیے بھی نامزد کیا گیا۔ فیض احمد فیض کی نظموں میں نقش فریادی ، دست صبا ، دستِ سانگ ، شام شہر یاران اور نوشکا وفا شامل ہیں۔ فیض احمد فیض کا انتقال 20 نومبر 1984 کو 73 سال کی عمر میں لاہور میں ہوا۔

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا

راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا

aur bhi dukh hain zamane mein mohabbat ke siwa
rahtin aur bhi hain wasal ki raahat ke siwa


دل ناامید تو نہیں ناکام ہی تو ہے

لمبی ہے غم کی شام مگر شام ہی تو ہے

dil na umeed to nahi nakaam hi to hai
lambi hai gham ki shaam magar shaam hi to hai

کر رہا تھا غم جہاں کا حساب

آج تم یاد بے حساب آئے

kar raha tha gham jahan ka hisaab
aaj tum yaad be hisaab aaye

اور کیا دیکھنے کو باقی ہے

آپ سے دل لگا کے دیکھ لیا

aur kya dekhnay ko baqi hai
aap se dil laga ke dekh liya


دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے

وہ جا رہا ہے کوئی شب غم گزار کے

dono Jahan teri mohabbat mein haar ke
woh ja raha hai koi shab gham guzaar ke

تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں

کسی بہانے تمہیں یاد کرنے لگتے ہیں

tumhari yaad ke jab zakham bharnay lagtay hain
kisi bahanay tumhe yaad karne lagtay hain


وہ بات سارے فسانے میں جس کا ذکر نہ تھا

 

وہ بات ان کو بہت نا گوار گزری ہے

woh baat saaray fasanay mein jis ka zikar nah tha
woh baat un ko bohat na gawaar guzri hai


نہیں نگاہ میں منزل تو جستجو ہی سہی

نہیں وصال میسر تو آرزو ہی سہی

nahi nigah mein manzil to justojoo hi sahi
nahi visale muyassar to arzoo hi sahi

گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے

چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

gulon mein rang bharay bad Nobahar chalay
chalay bhi aao ke Gulshan ka kaarobar chalay

اک طرز تغافل ہے سو وہ ان کو مبارک

اک عرض تمنا ہے سو ہم کرتے رہیں گے

k tarz taghaful hai so woh un ko mubarak
ik arz tamanna hai so hum karte rahen ge


آئے تو یوں کہ جیسے ہمیشہ تھے مہربان

بھولے تو یوں کہ گویا کبھی آشنا نہ تھے

aaye to yun ke jaisay hamesha thay meharban
bhoolay to yun ke goya kabhi aashna nah thay

زندگی کیا کسی مفلس کی قبا ہے جس میں

ہر گھڑی درد کے پیوند لگے جاتے ہیں

zindagi kya kisi muflis ki quba hai jis mein
har ghari dard ke pewand lagey jatay hain

نہ جانے کس لیے امیدوار بیٹھا ہوں

اک ایسی راہ پہ جو تیری رہ گزر بھی نہیں

nah jane kis liye umeed waar betha hon
ik aisi raah pay jo teri reh guzar bhi nahi

وہ آ رہے ہیں وہ آتے ہیں آ رہے ہوں گے

شب فراق یہ کہہ کر گزار دی ہم نے

woh aa rahay hain woh atay hain

aa rahay hon ge
shab faraaq yeh keh kar guzaar

di hum ne

مقام فیضؔ کوئی راہ میں جچا ہی نہیں

جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے

maqam faiz koi raah mein jacha hi nahi
jo koye yaar se niklay to soye daar chalay


ہم پرورش لوح و قلم کرتے رہیں گے

جو دل پہ گزرتی ہے رقم کرتے رہیں گے

hum parwarish looh o qalam karte rahen ge
jo dil pay guzarti hai raqam karte rahen ge

''آپ کی یاد آتی رہی رات بھر''

چاندنی دل دکھاتی رہی رات بھر

aap ki yaad aati rahi raat bhar
chandni dil dukhati rahi raat bhar

جانتا ہے کہ وہ نہ آئیں گے

پھر بھی مصروف انتظار ہے دل

jaanta hai ke woh nah ayen ge
phir bhi masroof intzaar hai dil

دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کر دیا

تجھ سے بھی دل فریب ہیں غم روزگار کے

duniya ne teri yaad se begana kar diya
tujh se bhi dil fraib hain gham rozgaar ke

کب ٹھہرے گا درد اے دل کب رات بسر ہوگی

سنتے تھے وہ آئیں گے سنتے تھے سحر ہوگی

kab thehray ga dard ae dil kab raat busr hogi
suntay thay woh ayen ge suntay thay sehar hogi

گر بازی عشق کی بازی ہے جو چاہو لگا دو ڈر کیسا

گر جیت گئے تو کیا کہنا ہارے بھی تو بازی مات نہیں

gir baazi ishhq ki baazi hai jo chaho

laga do dar kaisa

gir jeet gaye to kya kehna hare bhi

to baazi maat nahi

یہ آرزو بھی بڑی چیز ہے مگر ہم دم

وصال یار فقط آرزو کی بات نہیں

yeh arzoo bhi barri cheez hai magar hum dam
visale yaar faqat arzoo ki baat nahi

اک فرصت گناہ ملی وہ بھی چار دن

دیکھے ہیں ہم نے حوصلے پروردگار کے

ik fursat gunah mili woh bhi chaar din
dekhe hain hum ne hauslay parvar-digaar ke

تیرے قول و قرار سے پہلے

اپنے کچھ اور بھی سہارے تھے

tairay qoul o qarar se pehlay
–apne kuch aur bhi saharay thay

نہ گل کھلے ہیں نہ ان سے ملے نہ مے پی ہے

عجیب رنگ میں اب کے بہار گزری ہے

nah Gul khulay hain nah un se miley nah me pi hai
ajeeb rang mein ab ke bahhar guzri hai

اٹھ کر تو آ گئے ہیں تری بزم سے مگر

کچھ دل ہی جانتا ہے کہ کس دل سے آئے ہیں

uth kar to aa gaye hain tri bazm se magar
kuch dil hi jaanta hai ke kis dil se aaye hain

ساری دنیا سے دور ہو جائے

جو ذرا تیرے پاس ہو بیٹھے

saari duniya se daur ho jaye
jo zara tairay paas ho baithy

آئے کچھ ابر کچھ شراب آئے

اس کے بعد آئے جو عذاب آئے

aaye kuch abr kuch sharaab aaye
is ke baad aaye jo azaab aaye

بے دم ہوئے بیمار دوا کیوں نہیں دیتے

تم اچھے مسیحا ہو شفا کیوں نہیں دیتے

be dam hue bemaar dawa kyun nahi dete
tum achay masiihaa ho Shifa kyun nahi dete

یہ داغ داغ اجالا یہ شب گزیدہ سحر

وہ انتظار تھا جس کا یہ وہ سحر تو نہیں

yeh daagh daagh ujala yeh shab Guzida sehar
woh intzaar tha jis ka yeh woh sehar to nahi

جب تجھے یاد کر لیا صبح مہک مہک اٹھی

جب ترا غم جگا لیا رات مچل مچل گئی

jab tujhe yaad kar liya subah mehak mehak uthi
jab tra gham jaga liya raat machal machal gayi

دل سے تو ہر معاملہ کر کے چلے تھے صاف ہم

کہنے میں ان کے سامنے بات بدل بدل گئی

dil se to har maamla kar ke chalay thay saaf hum

kehnay mein un ke samnay baat badal badal gayi


رات یوں دل میں تری کھوئی ہوئی یاد آئی

جیسے ویرانے میں چپکے سے بہار آ جائے


raat yun dil mein tri khoyi hui yaad aayi

jaisay veraney mein chupkay se bahhar aa jaye

اب اپنا اختیار ہے چاہے جہاں چلیں

رہبر سے اپنی راہ جدا کر چکے ہیں ہم


ab apna ikhtiyar hai chahay jahan chalein

rehbar se apni raah judda kar chuke hain hum


انہیں کے فیض سے بازار عقل روشن ہے

جو گاہ گاہ جنوں اختیار کرتے رہے

inhen ke Faiz se bazaar aqal roshan hai

jo gaah gaah junoo ikhtiyar karte rahay


میری خاموشیوں میں لرزاں ہے

میرے نالوں کی گم شدہ آواز

meri khamoshion mein larzaan hai

mere naalon ki gum shuda aawaz



شام فراق اب نہ پوچھ آئی اور آ کے ٹل گئی

دل تھا کہ پھر بہل گیا جاں تھی کہ پھر سنبھل گئی

shaam faraaq ab nah pooch aayi aur aa ke tal gayi

dil tha ke phir behal gaya jaan thi ke phir sambhal gayi


جدا تھے ہم تو میسر تھیں قربتیں کتنی

بہم ہوئے تو پڑی ہیں جدائیاں کیا کیا

judda thay hum to muyassar theen kurbateen kitni

baham hue to pari hain judaiyun kya kya


فیضؔ تھی راہ سر بسر منزل

ہم جہاں پہنچے کامیاب آئے

faiz thi raah sir busr manzil

hum jahan puhanche kamyaab aaye

منت چارہ ساز کون کرے

درد جب جاں نواز ہو جائے

minnat charah saaz kon kere

dard jab jaan Nawaz ho jaye

ہم ایسے سادہ دلوں کی نیاز مندی سے

بتوں نے کی ہیں جہاں میں خدائیاں کیا کیا

hum aisay saada dilon ki niaz mandi se

buton ne ki hain jahan mein khudayan kya kya

براہ کرم یہ بھی پڑھیں: احمد فراز 2 لائن نظم



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں