2

مرزا غالب اردو شاعری-غالب 2 لائنز شایری

مرزا غالب کا اصل نام اسد اللہ غالب ہے۔ غالب مرزا عبداللہ ، آگرہ میں 1797 میں پیدا ہوئے۔ مرزا کوقان بیگ ، غالب کے دادا ، پنجاب کے حکمران کے لیے کام کرتے تھے۔ ان کی وفات کے بعد وہ دہلی چلے گئے اور نواب ذوالفقار الدولہ مرزا نجف خان کی حکومت سے رابطے میں رہے۔ مرزا کوقان بیگ نے ایک مقامی لڑکی سے شادی کی ، اور اس نے تین لڑکیوں اور چار لڑکوں کو جنم دیا۔ مرزا عبداللہ بیگ نے بھی عزت النساء بیگم سے شادی کی ہے اور وہ آگرہ کے امیر راجہ غلام حسین خاندان میں رہتے ہیں۔وہ آگرہ کو اپنا گھر سمجھتے ہیں۔مرزا عبداللہ بیگ نے کئی جگہوں پر کام کیا ہے۔ جب گالیبو کے والد کا انتقال ہوا تو وہ صرف 5 سال کے تھے۔ والد کی وفات کے بعد غالب کے چچا مرزا نصر اللہ (مرزا نصر اللہ) ان کی تمام تعلیم و تربیت کے ذمہ دار تھے۔ مرزا نصراللہ کی شادی نواب احمد بخشوری روجاس کی بے اولاد بہن سے ہوئی اور وہ خاتون انتقال کر گئیں۔ غالب کے چچا کے ہاتھی سے گرنے اور اس کے چار سال بعد مرنے کے کچھ عرصہ بعد ، اس کے دادا کاوا غلام حسین نے اسے فنڈ دینے کی ذمہ داری قبول کی۔ معظم نے پہلے مرزا غالب کی فارسی غزل کی مخالفت کی۔ بعد ازاں مرزا غالب نے استاد کی غزل کی سند جاری کی۔ وہ بہت خوش اور متاثر تھا۔ کہا جاتا ہے کہ مشہور شاعر اکبر الہ آبادی مرزا غالب کے ابتدائی استاد تھے۔ غالب ، جس کی عمر صرف 13 سال تھی ، نے 10 اگست 1810 کو نواب الٰہی بخش کی بیٹی عمرو بیگم سے شادی کی۔ میں پیدا ہوا تھا ، لہذا گالیبو مستقل طور پر دہلی میں رہتا ہے۔ گالیبو کے سات بچے ہیں ، لیکن وہ سب اللہ سے پیار کر گئے جب وہ بہت چھوٹے تھے۔ پھر اس نے اپنی بیوی کے بھتیجے عارف کو اپنا بیٹا بنا لیا ، لیکن بدقسمتی سے وہ بھی چھوٹی عمر میں مر گیا اور دہلی میں مقیم ہو گیا۔ گالب کے بہت سے مخالف پیدا ہوئے اور گالب نے بھی محسوس کیا کہ اس کی باتوں کو سمجھنا مشکل ہے۔ لوگ ان چیزوں کا مذاق اڑاتے تھے جو وہ پسند نہیں کرسکتے تھے۔ اس سے قطع نظر کہ میرا مطلب کیا ہے ، اس وقت لوگ غالب کی نظموں کو نہیں سمجھ سکتے تھے کیونکہ غالب کی نظموں کو سمجھنا ہر ایک کے لیے موزوں نہیں تھا۔ کلیم آغا جان غالب اور میر کی نظموں کا اس طرح مذاق اڑاتے ہیں۔ کلام میر زبان سمجھتے ہیں یا سمجھتے ہیں ، لیکن انہوں نے کہا کہ آپ سمجھتے ہیں یا نہیں ، خدا سمجھتا ہے کہ یہ غالب کی تمام مالی مشکلات ہیں۔ دو چیزیں بہت اہم ہو گئی ہیں۔ کولکتہ کی تقریر جو لوگ غالب کو الجھاتے ہیں وہ اپنی پنشن دوبارہ حاصل کرنے میں ناکام رہے۔دوسری طرف ، کولکتہ کے بیشتر شاعر غالب کے مدمقابل بن گئے ، لیکن اپنی بہنوں کے باوجود انہوں نے کولکتہ کی نئی ثقافتی زندگی پر شک نہیں کیا۔ کلکتہ کی محبت ان کے دلوں میں ہمیشہ زندہ رہے گی۔ فری گالب کا 1847 میں ایکسیڈنٹ ہوا ، کیونکہ گالب شروع سے ہی شطرنج کھیلنے کا عادی تھا ، اگر اس کا مزاج حاکم کے پاس آجائے تو یہ ایک تفریحی آلہ بن جائے گا اور غریب اس کا شکار ہوگا۔ 1841 میں مرزا کے گھر پر چھاپہ مارا گیا۔ اسے گرفتار کیا گیا لیکن تھوڑا سا جرمانہ ادا کرنے کے بعد رہا کر دیا گیا۔ کیس عدالت میں پیش ہوا۔ بہادر شاہ ظفر نے انگریزوں کو ذاتی طور پر لکھا۔ سٹی چیف نے ایک تجویز پیش کی ، لیکن مرکزی سزا سے بچ نہیں سکے۔ اس نے کچھ وقت دہلی کی جیل میں گزارا لیکن قبل از وقت رہا کر دیا گیا۔ 1850 میں بہادر شاہ ظفر نے غالب کو انجمن دولہ نظام جنگ کا لقب دیا اور اسے تیمو خاندان کی تاریخ لکھنے کا حکم دیا۔ نومبر 1854 میں استاد ابراہیم ذوق کا انتقال ہوا۔ بہادر شاہ ظفر کی بات درست کر کے غالب کے سپرد کر دی گئی۔ کچھ دوسرے مغل شہزادے بھی غالب کی اصلاح کو قبول کرنے لگے۔ سانحہ غالب کی روح بھی بن گیا ہے۔ 15 فروری 1869 کو وفات پائی ، غالب کو نظام الدین اولیا کے صحن میں دفن کیا گیا۔


ہم کو معلوم ہے جنت کی حقیقت لیکن

دل کے خوش رکھنے کو غالبؔ یہ خیال اچھا ہے

hum ko maloom hai jannat ki haqeeqat lekin
dil ke khush rakhnay ko ghalib yeh khayaal acha hai

عشق نے غالبؔ نکما کر دیا

ورنہ ہم بھی آدمی تھے کام کے

ishhq ne ghalib nikamma kar diya
warna hum bhi aadmi thay kaam ke

محبت میں نہیں ہے فرق جینے اور مرنے کا

اسی کو دیکھ کر جیتے ہیں جس کافر پہ دم نکلے

mohabbat mein nahi hai farq jeeney aur marnay ka
isi ko dekh kar jeetay hain jis kafir pay dam niklay

اس سادگی پہ کون نہ مر جائے اے خدا

لڑتے ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں

is saadgi pay kon nah mar jaye ae kkhuda

lartay hain aur haath mein talwar bhi nahi

ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے

بہت نکلے مرے ارمان لیکن پھر بھی کم نکلے

hazaron khuwaishe aisi ke har khwahish pay dam niklay
bohat niklay marey armaan lekin phir bhi kam niklay

ان کے دیکھے سے جو آ جاتی ہے منہ پر رونق

وہ سمجھتے ہیں کہ بیمار کا حال اچھا ہے

un ke dekhe se jo aa jati hai mun par ronaqe
woh samajte hain ke bemaar ka haal acha hai

عشرت قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا

درد کا حد سے گزرنا ہے دوا ہو جانا

Ishrat qatra hai darya mein fanaa ho jana
dard ka had se guzarna hai dawa ho jana

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا

اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا

yeh nah thi hamari qismat ke visale yaar hota
agar aur jeetay rehtay yahi intzaar hota


رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل

جب آنکھ ہی سے نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

ragon mein dorrtay phirnay ke hum nahi qaail
jab aankh hi se nah tapka to phir lahoo kya hai


عشق پر زور نہیں ہے یہ وہ آتش غالبؔ

کہ لگائے نہ لگے اور بجھائے نہ بنے


ishhq par zor nahi hai yeh woh aatish ghalib
ke lagaye nah lagey aur bujhaye nah banay

نہ تھا کچھ تو خدا تھا کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا

ڈبویا مجھ کو ہونے نے نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا

nah tha kuch to kkhuda tha kuch nah hota to kkhuda hota
dooboya mujh ko honay ne nah hota mein to kya hota

وہ آئے گھر میں ہمارے خدا کی قدرت ہے

کبھی ہم ان کو کبھی اپنے گھر کو دیکھتے ہیں

woh aaye ghar mein hamaray kkhuda ki qudrat hai
kabhi hum un ko kabhi –apne ghar ko dekhte hain

آئینہ کیوں نہ دوں کہ تماشا کہیں جسے

ایسا کہاں سے لاؤں کہ تجھ سا کہیں جسے

aaina kyun nah dun ke tamasha kahin jisay
aisa kahan se lau ke tujh sa kahin jisay

دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت درد سے بھر نہ آئے کیوں

روئیں گے ہم ہزار بار کوئی ہمیں ستاے کیوں


dil hi to hai nah sang o khisht dard se

bhar nah aaye kyun
royain ge hum hazaar baar koi hamein

staye kyun

رنج سے خوگر ہوا انساں تو مٹ جاتا ہے رنج

مشکلیں مجھ پر پڑیں اتنی کہ آساں ہو گئیں


ranj se khogar sun-hwa insaa to mit

jata hai ranj
Mushkilain mujh par parrin itni ke

aasan ho gayeen

بے خودی بے سبب نہیں غالبؔ

کچھ تو ہے، جس کی پردہ داری ہے


be khudi be sabab nahi Ghalib

kuch to hai, jis ki parda daari hai

آہ کو چاہیئے اک عمر اثر ہوتے تک

کون جیتا ہے تری زلف کے سر ہوتے تک

aah ko chahiye ik Umar assar hotay tak
kon jeeta hai tri zulff ke sir hotay tak

بسکہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا

آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا

Bas-ki dushwaar hai har kaam ka aasan hona
aadmi ko bhi muyassar nahi insaa hona


ہیں اور بھی دنیا میں سخن ور بہت اچھے

کہتے ہیں کہ غالبؔ کا ہے انداز بیاں اور


hain aur bhi duniya mein sukhan war bohat achay
kehte hain ke ghalib ka hai andaaz bayan aur

عشق سے طبیعت نے زیست کا مزا پایا

درد کی دوا پائی درد بے دوا پایا

ishhq se tabiyat ne zeist ka maza paaya
dard ki dawa payi dard be dawa paaya

موت کا ایک دن معین ہے

نیند کیوں رات بھر نہیں آتی


mout ka aik din Moueen hai
neend kyun raat bhar nahi aati

کعبہ کس منہ سے جاوگے غالبؔ

شرم تم کو مگر نہیں آتی

kaaba kis mun se jao ge ghalib sharam tum ko magar nahi aati

ہم نے مانا کہ تغافل نہ کرو گے لیکن

خاک ہو جائیں گے ہم تم کو خبر ہوتے تک


hum ne mana ke taghaful nah karo ge lekin
khaak ho jayen ge hum tum ko khabar hotay tak

پوچھتے ہیں وہ کہ غالبؔ کون ہے

کوئی بتلاؤ کہ ہم بتلائیں کیا

puchhte hain woh ke Ghalib kon hai
koi btlao ke hum batlaein kya


یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست ناصح

کوئی چارہ ساز ہوتا کوئی غم گسار ہوتا

yeh kahan ki dosti hai ke banay hain dost naaseh
koi charah saaz hota koi gham gsar hota

میری قسمت میں غم گر اتنا تھا

دل بھی یارب کئی دیے ہوتے

meri qismat mein gham gir itna tha
dil bhi yarab kayi diye hotay

کب وہ سنتا ہے کہانی میری

اور پھر وہ بھی زبانی میری

kab woh santa hai kahani meri
aur phir woh bhi zabani meri

کرنے گئے تھے اس سے تغافل کا ہم گلہ

کی ایک ہی نگاہ کہ بس خاک ہو گئے

karne gaye thay is se taghaful ka hum gilah
ki aik hi nigah ke bas khaak ho gaye

مرتے ہیں آرزو میں مرنے کی

موت آتی ہے پر نہیں آتی


martay hain arzoo mein marnay ki
mout aati hai par nahi aati

ہم وہاں ہیں جہاں سے ہم کو بھی

کچھ ہماری خبر نہیں آتی

hum wahan hain jahan se hum ko bhi
kuch hamari khabar nahi aati



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں