2

25 میر تقی میر 2 لائنز اردو نظمیں۔

 

میر تکمیر آگرہ میں پیدا ہوئے۔ میر کے والد کا انتقال اس وقت ہوا جب وہ 11 سال کے تھے۔میر اور ان کے چچا امانورا حسن ان سے بہت واقف تھے۔ چچا کی موت نے میر کی سوچ پر گہرا اثر ڈالا۔ ان کی نظموں سے دیکھا جا سکتا ہے کہ ان کے والد کی وفات کے بعد ان کے سوتیلے بھائی محمد حسن نے ان کے سر پر رحم کا ہاتھ نہیں ڈالا۔وہ دہلی آئے جب وہ تقریبا 14 14 سال کے تھے۔ ) ، میر جو قتل عام میں مارا گیا تھا ، کو آگرہ واپس آنا پڑا کیونکہ اس کے پاس کوئی ذریعہ معاش نہیں تھا ، لیکن اس بار آگرہ اس کے لیے پہلے سے زیادہ ہے۔ عظیم اذیت۔ کہا جاتا ہے کہ اسے وہاں اپنے رشتہ داروں سے پیار ہوگیا۔ اس کے گھر والوں نے اسے پسند کیا ، اسے آگرہ چھوڑنا پڑا۔ وہ دہلی واپس آیا ، جہاں اس کے سوتیلے بھائی کے چچا اس کے دنوں میں اس کے ساتھ تھے۔ لیکن ذکر میر میں میر جعفری ، علی عظیم آبادی اور سعادت علی خان آف امرہ کو ان کے اساتذہ کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ میر کے مطابق خان آجو کا علاج ان کے لیے اچھا نہیں ہے۔ یہ آگرہ میں میر کا پیار کا معاملہ ہو سکتا ہے۔ یہ محبت اس کے مصنوعی خوابوں اور خیالات میں۔ اینڈیگی کے ان دردناک تجربات نے اس پر گہرا اثر ڈالا ، اور یلوس کی حالت اس پر جاری کی گئی۔ اسے الوداع کہنے کے بعد رعیت خان کو جوابدہ ٹھہرایا گیا۔اس کے بعد وہ اسد یار خان بخشی کی فوج سے جڑا ہوا تھا۔ جاوید خان خواجہ سارہ کی حکومت نے انہیں ان کے کام کے لیے معاف کر دیا اور میر کے بارے میں بتایا۔ وہ برائے نام سپاہی ہیں۔ انہوں نے کچھ نہیں کیا۔ اس دوران جاوید خان مارا گیا اور میر بیکار ہو گیا۔ اس کے بعد کچھ عرصہ تک وہ راجہ جنگل اور راجہ نگرمل کے ساتھ رابطے میں رہا۔ میر نے کئی جگہوں پر راجہ نگرمل کے ساتھ لڑتے دیکھا ہے۔ اس کی حالت بگڑنے کے بعد ، وہ کچھ عرصے تک الگ تھلگ رہا۔ جب نگر شاہ اور احمد شاہ کی خونریزی نے دہلی اور لکھنؤ کو تباہ کیا تو نواب آصف ڈولا نے اسے بلایا اور لکھنؤ چلا گیا۔اس کی عمر تقریبا about 90 سال تھی۔ مل نے طویل المدتی امن اور آسانی کے بغیر ہنگامہ خیز زندگی گزاری۔ اس نے 6 لڈو زبانیں لکھیں ، جن میں غزلیں اور کواٹرین شامل ہیں۔ محمد حسین ہمیشہ کی طرح میر کے نازک مزاج اور برے مزاج کی کہانی سناتا ہے۔  اس میں کوئی شک نہیں کہ اس کی ابتدائی زندگی کے صدمے نے بعد کے مل پر بھی کچھ اثر ڈالا ، جیسا کہ اس کے اشعار اور تبصرے ثابت ہوئے۔ اگزی بھی کمال کو پہنچ چکا ہے۔ اس نے اردو میں خوبصورت فارسی ٹیکنالوجی کا تصور کیا۔ میر کو شاعری میں موتی بنانے کا خاص تجربہ ہے۔ ان کی نظم کا ہر لفظ موتی کی مانند ہے۔


پتا پتا بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ہے

جانے نہ جانے گل ہی نہ جانے باغ تو سارا جانے ہے


pata pata butta butta haal hamara jane hai

jane nah jane Gul hi nah jane baagh to sara jane hai


اب تو جاتے ہیں بت کدے سے میرؔ

پھر ملیں گے اگر خدا لایا

ab to jatay hain buut kadde se mir

phir milein ge agar kkhuda laya


نازکی اس کے لب کی کیا کہئے

پنکھڑی اک گلاب کی سی ہے

naazukee is ke lab ki kya kahiye

pankhari ik ghulaab ki si hai


گتھے ابتدائے عشق میں ہم

اب جو ہیں خاک انتہا ہے یہ

gatthy ibtidaye ishhq mein hum

ab jo hain khaak intahaa hai yeh


عشق اک میرؔ بھاری پتھر ہے

کب یہ تجھ ناتواں سے اٹھتا ہے


ishhq ik mir bhaari pathar hai

kab yeh tujh naatvaan se uthta hai


دکھائی دیئے یوں کہ بے خود کیا

ہمیں آپ سے بھی جدا کر چلے


dikhayi diye yun ke be khud kya

hamein aap se bhi judda kar chalay


میرؔ ہم مل کے بہت خوش ہوئے تم سے پیارے

اس خرابے میں مری جان تم آباد رہو

mir hum mil ke bohat khush hue tum se pyare

is kharabay mein meri jaan tum abad raho


لے سانس بھی آہستہ کہ نازک ہے بہت کام

آفاق کی اس کارگہ شیشہ گری کا


le saans bhi aahista ke naazuk hai bohat kaam

Afaq ki is kara-geh sheesha giri ka


ہوگا کسی دیوار کے سائے میں پڑا میرؔ

کیا ربط محبت سے اس آرام طلب کو

hoga kisi deewar ke saaye mein para mir

kya rabt mohabbat se is aaraam talabb ko


میرؔ عمداً بھی کوئی مرتا ہے

جان ہے تو جہان ہے پیارے


mir amdann bhi koi mrta hai

jaan hai to Jahan hai pyare


بے وفائی پہ تیری جی ہے فدا

قہر ہوتا جو باوفا ہوتا

be wafai pay teri jee hai fida

qehar hota jo bawafa hota


روتے پھرتے ہیں ساری ساری رات

اب یہی روزگار ہے اپنا


rotay phirtay hain saari saari raat

ab yahi rozgaar hai apna


ہمارے آگے ترا جب کسو نے نام لیا

دل ستم زدہ کو ہم نے تھام تھام لیا


hamaray agay tra jab kaso ne naam liya

dil sitam zada ko hum ne thaam thaam liya


ناحق ہم مجبوروں پر یہ تہمت ہے مختاری کی

چاہتے ہیں سو آپ کریں ہیں ہم کو عبث بدنام کیا


na-haq hum mjboron par yeh tohmat hai mukhtari ki

chahtay hain so aap karen hain hum ko abs
badnaam kya


دکھائی دیئے یوں کہ بے خود کیا

ہمیں آپ سے بھی جدا کر چلے

dikhayi diye yun ke be khud kya

hamein aap se bhi judda kar chalay


کیا کہوں تم سے میں کہ کیا ہے عشق

جان کا روگ ہے بلا ہے عشق


kya kahoon tum se mein ke kya hai ishhq

jaan ka rog hai bulaa hai ishhq


بے خودی لے گئی کہاں ہم کو

دیر سے انتظار ہے اپنا

be khudi le gayi kahan hum ko

der se intzaar hai apna


کیا کہیں کچھ کہا نہیں جاتا

اب تو چپ بھی رہا نہیں جاتا


kya kahin kuch kaha nahi jata

ab to chup bhi raha nahi jata


وصل میں رنگ اڑ گیا میرا

کیا جدائی کو منہ دکھاؤں گا

wasal mein rang urr gaya mera

kya judai ko mun dukhao ga


شرط سلیقہ ہے ہر اک امر میں

عیب بھی کرنے کو ہنر چاہئے

shart saleeqa hai har ik amar mein

aib bhi karne ko hunar chahiye


یہی جانا کہ کچھ نہ جانا ہائے

سو بھی اک عمر میں ہوا معلوم

yahi jana ke kuch nah jana haae

so bhi ik Umar mein sun-hwa maloom

جب کہ پہلو سے یار اٹھتا ہے

درد بے اختیار اٹھتا ہے

jab ke pehlu se yaar uthta hai

dard be ikhtiyar uthta hai


جن جن کو تھا یہ عشق کا آزار مر گئے

اکثر ہمارے ساتھ کے بیمار مر گئے

jin jin ko tha yeh ishhq ka azaar mar gaye

aksar hamaray sath ke bemaar mar gaye


سخت کافر تھاجن نے پہلے میرؔ

مذہب عشق اختیار کیا

sakht kafir thajn ne pehlay mir

mazhab ishhq ikhtiyar kya


میرؔ ان نیم باز آنکھوں میں

ساری مستی شراب کی سی ہے


mir un name baz aankhon mein

saari masti sharaab ki si hai


اب جو اک حسرت جوانی ہے

عمر رفتہ کی یہ نشانی ہے


ab jo ik hasrat jawani hai

Umar rafta ki yeh nishani hai


چشم ہو تو آئینہ خانہ ہے دہر

منہ نظر آتا ہے دیواروں کے بیچ

chasham ho to aaina khanah hai deher

mun nazar aata hai dewaron ke beech


اقرار میں کہاں ہے انکار کی سی صورت

ہوتا ہے شوق غالب اس کی نہیں نہیں پر


iqraar mein kahan hai inkaar ki si soorat

hota hai shoq ghalib is ki nahi nahi par


میرے رونے کی حقیقت جس میں تھی

ایک مدت تک وہ کاغذ نم رہا


mere ronay ki haqeeqat jis mein thi

aik muddat tak woh kaghaz num raha


زخم جھیلے داغ بھی کھائے بہت

دل لگا کر ہم تو پچھتائے بہت

zakham jhele daagh bhi khaye bohat

dil laga kar hum to pachtaye bohat



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں