2

Bes 29 Allama Iqbal Urdu Shayari-shair e mashriq 2 Lines Shayari in Urdu

ڈاکٹر علامہ محمد اقبال 9 نومبر 1877 کو بھارتی شہر انگلینڈ میں پیدا ہوئے۔ اس کے والدین نے اس کا نام محمد اقبال رکھا۔ علامہ اقبال کے والد شیخ نور محمد ایک دیندار آدمی ہیں۔ ان کا ماننا ہے کہ ان کے بیٹے کی مذہبی تعلیم کافی ہے۔ سیالکوٹ کے اکثر مقامی علماء کے ساتھ ان کے دوستانہ تعلقات ہیں۔ جب علامہ اقبال بسم اللہ کی عمر کو پہنچے تو انہیں رخصت کردیا گیا۔ غلام حسین۔ مولانا غلام حسین مقامی مسجد میں پڑھاتے تھے۔ شیخ نور محمد کو وہاں سفر کرنا تھا۔ علامہ اقبال کی تعلیم یہاں سے شروع ہوئی۔ تقریبا a ایک سال بعد شہر کے ایک عالم مولانا سید میر حسن (مولانا سید میر حسن) یہاں آئے اور دیکھا کہ ایک بچہ وہاں بیٹھا ہے۔ اس نے اپنے چہرے پر عظمت اور خوشی کی پہلی کرن دیکھی۔ نور محمد کے گھر کی طرف چلتے ہوئے مولانا نے شیخ نور محمد پر زور دیا کہ وہ اپنے بیٹے کو مدرسے میں قید نہ کریں۔ اس وجہ سے جدید تعلیم بھی ضروری ہے اور انہوں نے اس امید کا اظہار کیا کہ علامہ اقبال کو ان کی تربیت میں مدد ملے گی۔ شیخ نور محمد نے علامہ اقبال کو میر حسن کو دیا۔ ان کا سکول شیخ نور محمد کے گھر کے قریب ہے ، جہاں علامہ اقبال نے اردو ، فارسی اور عربی ادب کا مطالعہ شروع کیا۔ تین سال گزر چکے تھے سکاٹش مشن سکول۔ علامہ اقبال نے بھی پڑھانا شروع کیا اور اپنی تعلیم جاری رکھی۔انٹرمیڈیٹ کی کلاسیں بھی اسی سکول میں شروع ہوئیں ، اس لیے علامہ اقبال کو ایف اے میں شرکت کے لیے کہیں جانا نہیں پڑتا۔ یہ وہ دور ہے جب ان کی شاعری کا باضابطہ آغاز ہوا ، اس لیے شاعری کے لیے ان کا اطلاق ان کے بچپن سے دیکھا جا سکتا ہے۔ علامہ اقبال نے 3 مئی 1893 میں داخلہ لیا اور 1895 میں ایف اے کی تعلیم حاصل کی۔ وہ مزید تعلیم کے لیے لاہور آیا ، گورنمنٹ کالج میں تعلیم حاصل کی اور ایک ہاسٹل میں رہا۔ اس نے اپنے لیے انگریزی ، فلسفہ اور عربی مضامین کا انتخاب کیا۔ انہوں نے اورینٹل اکیڈمی میں عربی کی تعلیم اور تعلیم حاصل کی ، جہاں ان کی ملاقات مولانا فیض الحسن جیسے منفرد استاد سے ہوئی۔ اس وقت اورینٹل کالج گورنمنٹ کالج کی عمارت کا حصہ تھا اور دونوں کالجوں نے بعض شعبوں میں تعاون اور تعاون جاری رکھا۔ 1998 میں علامہ محمد اقبال نے بیچلر آف آرٹس کی ڈگری پاس کی اور ماسٹر آف فلاسفی میں داخلہ لیا۔ مارچ 1899 میں ماسٹر کا امتحان پاس کیا اور پنجاب میں پہلی پوزیشن حاصل کی۔ اسی وقت ، نومبر 1899 کی ایک رات ، ایک ہم جماعت اسے ایک حکیم امین الدین کے گھر ایک کنسرٹ سننے کے لیے لے گیا۔ جائے وقوع پر کئی اساتذہ اور طلباء موجود تھے۔ سننے والے۔ علامہ اقبال ، چونکہ وہ بالکل نئے تھے ، اس لیے ان کے نام پر غزل کی تلاوت شروع کی۔ یہاں سے علامہ اقبال کی بحث شروع ہوئی۔ ایم اے پاس کرنے کے بعد علامہ اقبال نے 13 مئی 1899 کو اورینٹل اکیڈمی میں شمولیت اختیار کی۔ اسی سال آرنلڈ نے پرنسپل کی حیثیت سے عہدہ سنبھالا۔علامہ اقبال نے اورینٹل اکیڈمی میں 4 سال گزارے اور گورنمنٹ اکیڈمی میں انگریزی پڑھنے کے لیے درمیان میں 6 ماہ کی چھٹی لی۔ وہ اعلیٰ تعلیم کے لیے کینیڈا یا امریکہ جانا چاہتا تھا ، لیکن آرنلڈ کی درخواست پر اس نے اس مقصد کے لیے برطانیہ اور جرمنی کا انتخاب کیا ، جب آرنلڈ برطانیہ واپس آیا تو اقبال نے اپنی کوتاہیوں کو محسوس کیا۔ 1903 میں علامہ اقبال کو سکول آف گورنمنٹ میں اسسٹنٹ پروفیسر مقرر کیا گیا ، اور بعد میں وہ شعبہ فلسفہ میں پڑھائی جاری رکھنے کے لیے گئے ، یکم اکتوبر 1905 تک ، انہوں نے یورپ جانے کے لیے تین سال کی چھٹی لی۔ برطانیہ میں تعلیم حاصل کی ، وہ وہاں تعلیم حاصل کرنے کے بعد جرمنی چلا گیا ، اور پی ایچ ڈی اور پی ایچ ڈی حاصل کرنے کے بعد ، وہ فائنل امتحان کی تیاری کے لیے لندن واپس آگیا۔ نتائج کا اعلان جولائی 1908 میں کیا گیا اور اسے کامیاب قرار دیا گیا۔گھر واپس آنے کے ایک ماہ بعد ، اس نے عدالت میں پریکٹس شروع کی۔وزارت زراعت
علی گڑھ فلسفہ کالج اور لاہور گورنمنٹ کالج ہسٹری کالج کی پیشکش کی گئی ، لیکن علامہ اقبال کا خیال تھا کہ وکالت ان کے حق میں ہے اور دونوں کالجوں سے معافی مانگ لی۔ اس نے فلسفہ پڑھانا شروع کیا ، لیکن وکالت بھی جاری رکھی۔ تعلیم اور پروپیگنڈے کو ایک ساتھ رکھنا اب بہت مشکل ہے ۔آخر کار 3 دسمبر 1910 کو انہوں نے سرکاری اکیڈمی سے استعفیٰ دے دیا ، تاہم کسی طرح اکیڈمی کے ساتھ تعلقات کو برقرار رکھا۔ 13 اپریل 1919 کو جلیانوالہ باغ ، امرتسر میں ایک احتجاجی ریلی نکالی گئی۔
ریجنالڈ ڈیل۔
لوگوں کو گھیر لیا اور سینکڑوں لوگوں کو گولی مار دی۔ جب اس واقعے کی خبر علامہ اقبال تک پہنچی تو اس نے مرنے والوں کے سوگ کے لیے نظمیں بھی لکھیں اور پھر علامہ اقبال مسلمانوں کے لیے کھڑے ہو گئے۔پھر 21 اپریل 1938 کو وفات پائی۔


خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے

خدا بندے سے خود پوچھے بتا تیری رضا کیا ہے


khudi ko kar buland itna ke har taqdeer se pehlay kkhuda bande se khud pouchye bta teri Raza kya hai


ستاروں سے آگے جہاں اور بھی ہیں

ابھی عشق کے امتحاں اور بھی ہیں

sitaron se agay jahan aur bhi hain
abhi ishhq ke imteha aur bhi hain


مانا کہ تیری دید کے قابل نہیں ہوں میں

تو میرا شوق دیکھ مرا انتظار دیکھ


mana ke teri deed ke qabil nahi hon mein
to mera shoq dekh mra intzaar dekh


تو شاہیں ہے پرواز ہے کام تیرا

ترے سامنے آسماں اور بھی ہیں

to shahin hai parwaaz hai kaam tera
tre samnay aasmaan aur bhi hain

نشہ پلا کے گرانا تو سب کو آتا ہے

مزا تو تب ہے کہ گرتوں کو تھام لے ساقی

nasha pila ke girana to sab ko aata hai
maza to tab hai ke gar tu ko thaam le saqi

ہزاروں سال نرگس اپنی بے نوری پہ روتی ہے

بڑی مشکل سے ہوتا ہے چمن میں دیدہ ور پیدا

hazaron saal nargis apni be noori pay roti hai
barri mushkil se hota hai chaman mein deedaa war peda

اچھا ہے دل کے ساتھ رہے پاسبان عقل

لیکن کبھی کبھی اسے تنہا بھی چھوڑ دے

acha hai dil ke sath rahay Pasban aqal lekin kabhi kabhi usay tanha bhi chore day

اپنے من میں ڈوب کر پا جا سراغ زندگی

تو اگر میرا نہیں بنتا نہ بن اپنا تو بن

apne mann mein doob kar pa ja suraagh zindagi
to agar mera nahi bantaa nah ban apna to ban


دنیا کی محفلوں سے اکتا گیا ہوں یا رب

کیا لطف انجمن کا جب دل ہی بجھ گیا ہو

duniya ki mehafilon se ukta gaya hon ya rab
kya lutaf anjuman ka jab dil hi bujh gaya ho

نہیں تیرا نشیمن قصر سلطانی کے گنبد پر

تو شاہیں ہے بسیرا کر پہاڑوں کی چٹانوں میں

nahi tera nashiman qasr sultaani ke gunbad par
to shahin hai basera kar pahoron ki chatanoo mein


دل سے جو بات نکلتی ہے اثر رکھتی ہے

پر نہیں طاقت پرواز مگر رکھتی ہے

dil se jo baat nikalti hai assar rakhti hai
par nahi taaqat parwaaz magar rakhti hai

علم میں بھی سرور ہے لیکن

یہ وہ جنت ہے جس میں حور نہیں

ilm mein bhi suroor hai lekin
yeh woh jannat hai jis mein hoor nahi

اے طائر لاہوتی اس رزق سے موت اچھی

جس رزق سے آتی ہو پرواز میں کوتاہی

ae Tair lahoti is rizaq se mout achi
jis rizaq se aati ho parwaaz mein kotahi


حیا نہیں ہے زمانے کی آنکھ میں باقی

خدا کرے کہ جوانی تری رہے بے داغ

haya nahi hai zamane ki aankh mein baqi
kkhuda kere ke jawani tri rahay be daagh

غلامی میں نہ کام آتی ہیں شمشیریں نہ تدبیریں

جو ہو ذوق یقیں پیدا تو کٹ جاتی ہیں زنجیریں


ghulami mein nah kaam aati hain shamsherain nah tadbeerye
jo ho zouq yaqeen peda to kat jati hain zanjeeren

فقط نگاہ سے ہوتا ہے فیصلہ دل کا

نہ ہو نگاہ میں شوخی تو دلبری کیا ہے


faqat nigah se hota hai faisla dil ka
nah ho nigah mein shokhi to dilbari kya hai


جس کھیت سے دہقاں کو میسر نہیں روزی

اس کھیت کے ہر خوشۂ گندم کو جلا دو

jis khait se d_hqan ko muyassar nahi rozi
is khait ke har khosha gandum ko jala do


حرم پاک بھی اللہ بھی قرآن بھی ایک

کچھ بڑی بات تھی ہوتے جو مسلمان بھی ایک

haram pak bhi Allah bhi quran bhi aik
kuch barri baat thi hotay jo musalman bhi aik

نہ سمجھو گے تو مٹ جاؤ گے اے ہندوستاں والو

تمہاری داستاں تک بھی نہ ہوگی داستانوں میں

nah samjhoo ge to mit jao ge ae hndostan walo
tumhari dastan tak bhi nah hogi dastanoon mein

عمل سے زندگی بنتی ہے جنت بھی جہنم بھی

یہ خاکی اپنی فطرت میں نہ نوری ہے نہ ناری ہے

amal se zindagi banti hai jannat bhi jahannum bhi
yeh khaki apni fitrat mein nah noori hai nah naari hai

تمنا درد دل کی ہو تو کر خدمت فقیروں کی

نہیں ملتا یہ گوہر بادشاہوں کے خزینوں میں

tamanna dard dil ki ho to kar khidmat faqeero ki
nahi milta yeh gohar badshahon ke khazino mein

باطل سے دبنے والے اے آسماں نہیں ہم

سو بار کر چکا ہے تو امتحاں ہمارا

baatil se dabnay walay ae aasmaan nahi hum
so baar kar chuka hai to imteha hamara

جمہوریت اک طرز حکومت ہے کہ جس میں

بندوں کو گنا کرتے ہیں تولا نہیں کرتے

jamhoriat ik tarz hukoomat hai ke jis mein
bundon ko gina karte hain tola nahi karte


عشق بھی ہو حجاب میں حسن بھی ہو حجاب میں

یا تو خود آشکار ہو یا مجھے آشکار کر

ishhq bhi ho hijaab mein husn bhi ho hijaab mein
ya to khud aashkaar ho ya mujhe aashkaar kar


عقابی روح جب بیدار ہوتی ہے جوانوں میں

نظر آتی ہے ان کو اپنی منزل آسمانوں میں

aqaabi rooh jab bedaar hoti hai jawanoo mein

nazar aati hai un ko apni manzil asmano mein


عقل کو تنقید سے فرصت نہیں

عشق پر اعمال کی بنیاد رکھ

aqal ko tanqeed se fursat nahi
ishhq par aamaal ki bunyaad rakh


یوں تو سید بھی ہو مرزا بھی ہو افغان بھی ہو

تم سبھی کچھ ہو بتاؤ مسلمان بھی ہو

yun to syed bhi ho Mirza bhi ho Afghan bhi ho
tum sabhi kuch ho batao musalman bhi ho

ترے آزاد بندوں کی نہ یہ دنیا نہ وہ دنیا

یہاں مرنے کی پابندی وہاں جینے کی پابندی

tre azad bundon ki nah yeh duniya nah woh duniya

yahan marnay ki pabandi wahan jeeney ki pabandi


انوکھی وضع ہے سارے زمانے سے نرالے ہیں

یہ عاشق کون سی بستی کے یارب رہنے والے ہیں


anokhi waza hai saaray zamane se nirale hain

yeh aashiq kon si bastii ke yarab rehne walay hain



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں