2

اردو میں زندگی کے بہترین 25 بہترین اقتباسات۔


انسان کو حکم تھا کے اپنے نفس کو مارے مگر انسان نے اپنے ضمیر کو ہی مار ڈالا .

Insaan ko hukm tha k apny nafs ko mary magar insaan ny apny zameer ko hi maar dala.


چین کر کھانے والوں کا پیٹ کبھی نہیں بھرتا اور بانٹ کر کھانے والے کبھی بھوکے نہیں رہتے .

Cheen kr khany walon ka pait kbhi ni bherta aur baant kr khany waly kbhi bhooky nhi rehty.

افلاس کی بستی میں زرا جا کر تو دیکھو وہاں بچے تو ہوتے ہیں مگر بچپن نہیں ہوتا .

Aflaas ki basti mein zra ja kr to dekho wahan bachy to hoty hain magar bachpan nhi hota.



مفلس کے بدن کو بھی ہے چادر کی ضرورت اب کھل کے مزاروں پر اعلان کیا جائے .

Muflis k badan ko bhi hai chader ki zroorat ab khul k mazaron par elaan kia jaye.



ہم نے وہ روزے رکھیں ہیں صاحب جو ہم پر فرض بھی نا تھے .


hum ne woh rozay rakhen hain sahib jo hum par farz bhi na thay .



اچھے کے ساتھ اچھے رہو اور برے کے ساتھ برے مت بنو کیوں کے تم

پانی سے خون کو صاف کر سکتے ہو خون سے خون کو نہیں .


Achy k sath achy rho aur buray k sath buray mat bno ku k tum pani sy khoon ko saaf kr sktay ho khoon sy khoon ko nhi.



بیت ال مقدس کی دیواریں پوچھتی ہیں کیا کوئی صلح الدین ایوبی آرہا ہے ؟

جواب آتا ہے كے اب تو اسلام صرف امن کا درس دیتا ہے . !

Beet Al Muqaddas ki diivaaren pouchti hain kya koi Salah Aldeen ayobi araha hai? jawab aata hai ke ab to islam sirf aman ka dars deta hey….!


ایک ہزار قابل انسان مر جانے سے اتنا نقصان نہیں ہوتا

جتنا كے ایک اَحْمَق كے صاحب اختیار ہو جانے سے ہوتا ہے .


Aik hazaar qabil ensaan mar janay say itna nuqsaan nahi hota jitna ke aik ahmaq ke sahib ikhtiyar ho janay se hota hai.


غریب کا بچہ روٹی چرا كے چور ہو گیا اور لوگ ملک کھا گے قانون لکھتے لکھتے .

Ghareeb ka bacha rootti chura ke chor ho gaya

aur log malik kha gay qanoon likhate likhate.



ہمارے حکمرانوں نئے اتنی دولت گھروں میں جمع کر لی ہے

كے عزت كے لیے گھر میں جگہ ہی نہیں بچی ..


Hamaray hukmraanon nay itni doulat gharon mein jama

kar li hai ke izzat ke liye ghar mein jagah hi nahi bachi.


غربت خیرات سے نہیں انصاف سے ختم ہوتی ہے .

Gurbat khairaat se nahi insaaf se khatam hoti hai.


دھوپ کا تو بس نام ہی بدنام ہے

جلتے تو لوگ ایک دوسرے سے ہیں

Dhoop ka toh bas naam hi badnaam hai
Jaltey toh log aek doosrey se hain


چھوٹے ذہنوں میں ہمیشہ خواہشیں

اور بڑے ذہنوں میں ہمیشہ مقاصد ہوا کرتے ہیں

Chohtay zehnoo me hamesha khuaish
Or baray zehnoo me hamesha maqasid hua karte hain.

خوبصورت زندگی کا راز

دعا کی جائے دعا دی جائے دعا لی جائے

Khubsurat zindagi ka raaz
Dua ki jaie dua di jaie dua li jaie.

وقت، موسم اور لوگ سب کی ایک سی فطرت ہوتی ہے

کب، کون، کہاں بدل جائے پتا ہی نہیں چلتا

Waqt, moosam aur log sab ki aik si fitrat hoti hai
Kab, kon, kahan badal jaie pta hi nhai chalta.


کچھ لوگ مسکراہٹیں بکھیر کربھی یہ احساس نہیں ہونے دیتے کہ وہ اندر سے مرچکے ہیں

Kuch log muskurahatain bakhair kar bhi

yeh ehsaas nahi honey dete
keh wo andar se mar chukey hain.


لوگوں کو اپنی اچھائیاں بتا بتا کر ان کے ساتھ رہنے کی بھیک مت مانگیں

اپنی کچھ برائیاں بتا کر دیکھیں کون کون ساتھ چلتا ہے سب معلوم ہوجائے گا

Logon ko apni achaiyan bta bta kar

in ke sath rehne ki bheek mat mangain
apni kuch buraiyan bta kar dekhain kon kon sath chalta hai sab maloom hojie ga .


جیسا سلوک تو مخلوق خدا سے کرے گا

ویسا ہی سلوک خدا تیرے ساتھ کرے گا

Jesa sulook tu makhlooq-e-khuda se kare ga
wesa hi sulook khuda tere sath kare ga.

مجھے اپنے کردار پر اتنا تو یقین ہے

کوئی مجھے چھوڑ تو سکتا ہے مگر بھلا نہیں سکتا

Mujhe apney kirdar par itna to yaqeen hai
koi mujhe chor to sakta hai magar bhula nahi sakta .


دل دکھانے پر بھی جو شخص آپ سے شکایات تک نہ کرسکے

اس شخص سے زیادہ محبت آپ کو کوئی نہیں کرسکتا

Dil dukhaney par bhi jo shakhs

aap se shikayat tak na karsake
is shakhs se zada muhbat aap ko koi nahi karsakta.


قدر تو وہ ہوتی ہے جو کسی کی موجودگی میں ہو

جو کسی کے بعد ہو اسے پچھتاوا کہتے ہیں

Qadar to wo hoti hai jo ksi ki mojoodgi main ho
jo ksi ke bad ho usay pachtava kehtey hain .


"دولت" اور "عہدے" انسان کو عارضی طور پر بڑا کرتے ہیں

لیکن "انسانیت" اور اچھا "اخلاق" انسان کو ہمیشہ بلند درجے پر رکھتا ہے

Dolat or auhdey insaan ko aarzi tor par bara kartey hain
lekin insaniyat or acha ikhlaq insaan ko hamesha buland darje par rakhta hai .

درخت اپنا پھل خود نہیں کھاتے، دریا خود اپنا پانی نہیں پیتے، پتہ ہے کیوں؟

کیونکہ دوسروں کے لئے جینا ہی اصل زندگی ہے

Darakht apna phal nahi khatey, darya khud apna pani nahi peete, pta hai kyuen?
Kyuenkeh dosroon ke liye jena hi asal zindagi hai .

لوگ اچھا پڑھنے اور اچھا لکھنے والے کو قابل انسان سمجھتے ہیں

جبکہ حقیقت میں قابل وہ ہے جو اچھا سوچے اور اچھا بولے

Log acha parhne aur acha likhney wale ko qabil insaan samjhtey hain

jbkeh haqeeqat main qabil wo hai jo acha soche aur acha bole


وہ کتابوں میں درج تھا ہی نہیں

جو پڑھایا سبق زمانے نے

Wo kitaboon main darj tha hi nahi
jo parhaya sabaq zamane ne .



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں