2

سب انتشار میں تھا۔




سب انتظار میں تھے، کب کوئی زبان کُھلے

پھر اُس کے ہونٹ کُھلے اور سب کے کان کُھلے

بھلے ہو لاکھ حسیں خواب ،یاد رہتا نہیں

جب آنکھ درجنوں لوگوں کے درمیان کُھلے

بہت سا لیں گے کرایہ ،ذرا سی دیں گے جگہ

یہاں کے لوگوں کے دل تنگ ہیں ،مکان کُھلے!

گیا وہ شخص تو نظریں اٹھائیں لوگوں نے

ہوا تھمی تو جہازوں کے بادبان کُھلے

ہماری آنکھ میں کھدّر کے خواب بِکتے تھے

تم آئے اور یہاں بوسکی کے تھان کُھلے

جگہ ہو اِس میں، کم از کم، مرے یقیں کے لیے

میں چاہتا ہوں کہ اتنا تِرا گمان کھُلے

یہ کون بھول گیا اُن لبوں کا خاکہ یہاں؟

یہ کون چھوڑ گیا گُڑ کے مرتبان کُھلے؟

sab intzaar mein thay, kab koi zabaan kُhle
phir uss ke hont kُhle aur sab ke kaan kُhle

bhallay ho laakh hsin khawab, yaad rehta nahi
jab aankh darjanon logon ke darmiyan kُhle

bohat sa len ge kiraya, zara si den ge jagah
yahan ke logon ke dil tang hain, makaan kُhle !
gaya woh shakhs to nazrain uthayen logon nay

sun-hwa thami to jahazoo ke badbaan kُhle

hamari aankh mein Khaddar ke khawab bektay thay
tum aaye aur yahan boski ke thaan kُhle

jagah ho iss mein, kam az kam, marey yaqeen ke liye
mein chahta hon ke itna tera gumaan khُle

yeh kon bhool gaya unn labon ka khaka yahan ?
yeh kon chore gaya gur ke martbaan kُhle ?



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں