2

ٹاپ 26 باریش اردو نظمیں برائے واٹس ایپ جلد 2۔

یوں ہی موسم کی ادا دیکھ كے یاد آیا ہے

کس قدر جلد بَدَل جاتے ہیں انسان جاناں

yun hi mausam ki adadekh ke yaad aaya hai
kis qader jald badal jatay hain insaan janan

جو بارش کی تمنا ہے تو ان آنکھوں میں آ بیٹھو

وہ برسوں میں کہیں برسیں یہ برسوں سے برستی ہے

jo barish ki tamanna hai to un aankhon mein aa betho
woh barson mein kahin barsen yeh barson se barasti hai

محبت تو بارش ہے

جسے چھونے کی خواہش میں

ہتھیلیاں   گیلی ہو جاتی ہیں

مگر ہاتھ ہمیشہ خالی ہی رہتے ہیں

mohabbat to barish hai
jisay chone ki khwahish mein
hatheliyan giili ho jati hain
magar haath hamesha khaali hi rehtay hain

تیز بارش میں کھڑا ہوں وہ اک جملہ سننے کو

ارے ادھر آؤ بھیگ جاؤ گے

taiz barish mein khara hon woh ik jumla suneney ko
arrey idhar aao bhiig jao ge

یہ حسنِ موسم ، یہ بارش ، یہ ہوائیں

لگتا ہے محبت نے آج کسی کا ساتھ دیا ہے

yeh husn mausam, yeh barish, yeh hawae
lagta hai mohabbat ne aaj kisi ka sath diya hai

بوندوں نے گر کے غضب سا ہے ڈالا

موسم میں موسم عجب سا ہے ڈالا

یہ بارش کا بادل بھی مجھ سا ہے رنج

جو چھلکا ذرا ، سب بَدَل سا ہے ڈالا

boundon ne gir ke gazabb sa hai dala
mausam mein mausam ajab sa hai dala
yeh barish ka baadal bhi mujh sa hai ranj
jo chilka zara, sab badal sa hai dala

دور تک چھائے تھے بادل اور کہیں سایہ نہ تھا

اس طرح برسات کا موسم کبھی آیا نہ تھا

daur tak chaaye thay baadal aur kahin saya nah tha

is terhan barsaat ka mausam kabhi aaya nah tha

تیز بارش میں کبھی سرد ہواؤں میں رہا

اک تیرا ذکر تھا جو میری صداؤں میں رہا

کتنے لوگوں سے میرے گہرے مراسم ہیں مگر

تیرا چہرہ ہی فقط میری دعاؤں میں رہا

taiz barish mein kabhi sard hawaon mein raha
ik tera zikar tha jo meri sadaaon mein raha
kitney logon se mere gehray marasim hain magar
tera chehra hi faqat meri duaon mein raha

غم کی بارش نے تیرے نقش کو دھویا نہیں

تو نے مجھے کھو دیا میں نے تجھے کھویا نہیں

gham ki barish ne tairay naqsh ko dhoya nahi
to ne mujhe kho diya mein ne tujhe khoya nahi

اس کو آنا تھا کہ وہ مجھ کو بلاتا تھا کہیں

رات بھر بارش تھی اس کا رات بھر پیغام تھا


is ko aana tha ke woh mujh ko bulaataa tha kahin
raat bhar barish thi is ka raat bhar pegham tha

مجھے مار ہی نہ ڈالے ان بادلوں کی سازش

یہ جب سے برس رہے ہیں تم یاد آ رہے ہو

mujhe maar hi nah daaley un baadalon ki saazish
yeh jab se baras rahay hain tum yaad aa rahay ho

برس سکے تو برس جائے اِس گھڑی ورنہ

بکھیر ڈالے گی بادل كے سارے خواب ہوا

baras sakay to baras jaye iss ghari warna
bekhair daaley gi baadal ke saaray khawab sun-hwa

اب نئے لوگ اسے مجھ سے حسیں لگتے ہیں

اب اسے میری ضرورت بھی کہاں پڑتی ہے

ab naye log usay mujh se hsin lagtay hain
ab usay meri zaroorat bhi kahan padtee hai

خشک صحرا پہ نہیں پڑتی ہے اک ابر کی بوند

جہاں دریا ہوں یہ بارش بھی وہاں پڑتی ہے

khushk sehraa pay nahi padtee hai ik abr ki boond jahan darya hon yeh barish bhi wahan padtee hai 🍁

بارش کی بھیگی راتوں میں جب اشک فشانی ہوتی ہے

اک تیرا تصور ہوتا ہے اک تیری کہانی ہوتی ہے

barish ki bheegi raton mein jab asshk fashani hoti hai
ik tera tasawwur hota hai ik teri kahani hoti hai

لو ٹ آئی ہیں دیکھو بارشیں پھر سے یہاں وہاں

اِک تم کو ہی لوٹ کر آنے کی فرصت نہیں ملی

lo t aayi hain dekho barishain phir se yahan vhan
ik tum ko hi lout kar anay ki fursat nahi mili

اِس کو کہتے ہیں مُحبت کا پلٹ کر آنا

اُسی شِدت سے میرے ساتھ دوبارا کوئی ہے

iss ko kehte hain mohabbat ka palat kar aana
usi sh
ِdt se mere sath dobaara koi hai

بارش کی طرح تجھ پہ برستی رہیں خوشیاں

ہر بوند تیرے دل سے ہر غم کو مٹا دے

barish ki terhan tujh pay barasti rahen khusihyan
har boond tairay dil se har gham ko mita day

جسے بارش كے پانی میں بہا کر مسکراتے تھے

مجھے کاغذ کی وہ کشتی ذرا پِھر سے بنا دینا

jisay barish ke pani mein baha kar muskuratay thay
mujhe kaghaz ki woh kashti zara p
ِhr se bana dena

: تم میرے ساتھ بھیگنے کا وعدہ تو کرو ۔

محبتوں کی بارش ہم خود کریں گے ۔

: tum mere sath bhigne ka wada to karo. mohabbaton ki barish hum khud karen ge .

یہ رم جھم،یہ بارش، یہ آوارگی کا موسم

ہمارے بس میں ہوتا تیرے پاس چلے آتے

yeh rim jhim, yeh barish, yeh avargi ka mausam
hamaray bas mein hota tairay paas chalay atay

یاد آئی وہ پہلی بارش

جب تجھے ایک نظر دیکھا تھا

yaad aayi woh pehli barish
jab tujhe aik nazar dekha tha

رہنے دو اب کے تم بھی مجھے پڑھ نہ سکو گے

برسات میں کاغذ کی طرح بھیگ گیا ہوں میں

rehne do ab ke tum bhimujhe parh nah sako ge
barsaat mein kaghaz ki terhan bhiig gaya hon mein

نم ہے پلکیں تیری اے موج ہوا رات كے ساتھ

کیا تجھے بھی کوئی یاد آتا ہے برسات كے ساتھ

num hai palken teri ae mouj sun-hwa raat ke sath
kya tujhe bhi koi yaad aata hai barsaat ke sath

شب غم کی بارش میں تیرا عکس نظر آتا ہے

تیری یادوں ، تیری باتوں کا رقص نظر آتا ہے

shab gham ki barish mein tera aks nazar aata hai
teri yaado, teri baton ka raqs nazar aata hai

یہ آنکھ جب ذرا نم ہو اور بارش کا موسم ہو

مجھے لاحق تیرا غم ہو اور بارش کا موسم ہو

اداسی جم سی جاتی ہے کسی برف کی مانند

خیالوں میں اگر تم ہو اور بارش کا موسم ہو

yeh aankh jab zara num ho aur barish ka mausam ho
mujhe la-haq tera gham ho aur barish ka mausam ho

udasi jim si jati hai kisi barf ki manind
khayalon mein agar tum ho aur barish ka mausam ho



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں