3

واٹس ایپ کی حیثیت کے لیے اردو میں 15 محرم کی نظمیں۔

واٹس ایپ اسٹیٹس کے لیے اردو میں 15 محرم کی نظمیں۔

جو ظلم پہ لعنت نہ کرے آپ لعیں ہے

جو جبر کا منکر نہیں وہ منکرِ دیں ہے

jo zulm pay Laanat nah kere aap Laeen hai

jo jabar ka Munkir nahi woh Munkar Deen hai

حق و باطل کی ہے پیکار ہمیشہ جاری

جو نہ باطل سے ڈریں ہیں وہی شیعانِ حسین

haq o baatil ki hai pekaar hamesha jari

jo nah baatil se dareen hain wohi shiaan Hussain

تو نے صداقتوں کا نہ سودا کیا حسینؑ

باطل کے دل میں رہ گئی حسرت خرید کی

to ne sadaqaton ka nah soda kya Hussain

baatil ke dil mein reh gayi hasrat khareed ki

وہی پیاس ہے وہی دشت ہے وہی گھرانا ہے

مشکیزے سے تیر کا رشتہ بہت پرانا ہے

wohi pyaas hai wohi dasht hai wohi gharana hai

maskeezy se teer ka rishta bohat purana hai

حسین دیکھ رہے تھے ذرا بجھا کے چراغ

کہیں بجھے تو نہیں دشت میں وفا کے چراغ

Hussain dekh rahay thay zara bujha ke chairag

kahin bujhe to nahi dasht mein wafa ke chairag

دلوں کو غسلِ طہارت کے واسطے جا کر

کہیں سے خونِ شہیدانِ نینوا لائو

dilon ko ghusale Taharat ke wastay ja kar

kahin se khon-e shaheedan ninwa layo

کتنے یزید و شمر ہیں کوثر کی گھات میں

پانی حسین کو نہیں ملتا فرات کا

kitney Yazid o Shamer hain kusar ki ghaat mein

pani Hussain ko nahi milta furaat ka

چاہتا یہ ہوں کہ دنیا ظلم کو پہچان جائے

خواہ اس کرب و بلا کے معرکے میں جان جائے

chahta yeh hon ke duniya zulm ko pehchan jaye

khuwa is karb o bulaa ke markay mein jaan jaye

حقیقتِ ابدی ہے مقامِ شبیری

بدلتے رہتے ہیں اندازِ کوفی و شامی

Haqeeqat abdi hai mqamِ shabiri

bdalty rehtay hain andaz kofi o Shami

ڈوب کر پار اتر گیا اسلام

آپ کیا جانیں کربلا کیا ہے

doob kar paar utar gaya islam

aap kya jaanen karbalaa kya hai

جو کربلا میں شاہِ شہیداں سے پھِر گئے

کعبہ سے منحرف ہوئے قرآں سے پھِر گئے

jo Karbalaa mein shahِ Shaheedan se phِr gaye

kaaba se Munharif hue Qraan se phِr gaye

دشمن جو ہو حسین علیہ السلام کا

آتشؔ نہ کم سمجھ اسے ابنِ زیاد سے

dushman jo ho Hussain alaihi salam ka

Aatish nah kam samajh usay ibn-e Ziyaad se

اے زندگی! کیسے میں ترے درد سمیٹوں

لاؤں میں کہاں سے بھلا زینبؓ سا کلیجہ

ae Zindagi! kaisay mein tre Dard sametoon

lau mein kahan se bhala Zainab sa Kaleja

قاتل حسین اصل میں مرگ یزید ہے ،

اسلام زندہ ہوتا ہا ہر کربلا کے بعد ،

Qatil-E-Hussain Asal Main Marg-E-Yazeed Hai,

Islam Zinda Hota Ha Har Karbala K Baad

فراتِ وقتِ رواں دیکھ سوئے مقتل دیکھ

جو سر بلند ہے اب بھی وہ سر حسینؑ کا ہے

Furaat waqt e rawan ! dekh soye maqtal dekh

jo sir buland hai ab bhi woh sir Hussain ka hai



Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں